The news is by your side.

Advertisement

موبائل ایپ جو آپ سے گھر کا کوڑا کرکٹ خریدے گی

کراچی جیسے بڑے شہر میں کچرا اور گندگی سنگین مسئلہ ہے جسے ٹھکانے لگانے کا کوئی مناسب انتظام نہیں ہے۔ یومیہ بنیادوں پر گھروں سے نکلنے والا کوڑا ماحول اور انسانی صحت کے لیے خطرہ بن چکا ہے۔ صرف کراچی ہی نہیں ملک بھر میں سب سے زیادہ غیر نامیاتی کوڑا گھروں سے نکلتا ہے جسے کسی استعمال کے قابل بنانے یا مناسب طریقے سے ٹھکانے لگانے کا کوئی انتظام نہیں ہے۔ اس ضمن میں اقوام متحدہ کی ذیلی تنظیم کی ایک رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ ملک میں کوڑے کو مناسب انداز سے ٹھکانے نہیں لگایا جا رہا اور جس طریقۂ کار پر عمل کیا جارہا ہے، وہ آلودگی میں اضافے کا سبب بن رہا ہے۔

یہ تو وہ باتیں ہیں جو کراچی کے باسی اور اس ملک کا ہر شہری جانتا ہے، لیکن کیا آپ کو معلوم ہے کہ اس ڈیجیٹل دور میں موبائل ایپلیکیشن کے ذریعے کچرے کو ٹھکانے لگانے اور اس سے فائدہ اٹھانے کی کوشش بھی کی جارہی ہے۔ اس طرح لوگ اپنے گھروں کا ٹھوس اور غیرنامیاتی کوڑا جلانے یا اسے کھلی جگہوں پر پھینکنے کی عادت ترک کرکے غلاظت اور آلودگی میں کمی لانے میں کردار ادا کرسکتے ہیں۔

عام طور پر گھروں کا کوڑا کرکٹ یا تو کھلی جگہوں پر پھینک دیا جاتا ہے یا اسے آگ لگا دی جاتی ہے جو ماحول اور فضا کے لیے خطرناک ہے۔ جکارتا کے شہری اب اپنے گھر کے کوڑے سے مختلف اشیا جیسے پلاسٹک، کاغذ وغیرہ کو خود ہی الگ کرکے راپل نامی ایپلیکیشن پر اس کی تصاویر اور ضروری تفصیل بھیج رہے ہیں جس کے بعد ان کا نمائندہ مالک سے غیرنامیاتی کوڑا بامعاوضہ حاصل کر لیتا ہے۔ اس موبائل ایپ کے ذریعے صرف غیرنامیاتی کوڑا اکٹھا کیا جاتا ہے۔ موبائل ایپ کا استعمال آسان بنایا گیا ہے جس پر شہری کوڑے کا اندازاً وزن اور چند ضروری باتیں بتاتے ہوئے اس کی تصاویر بھیجے تو اسے بتا دیا جاتا ہے کہ اس کے بدلے وہ کتنی رقم حاصل کرسکتا ہے۔

یہ مالی طور پر سود مند سروس ہے اور اسے لوگوں نے سراہا ہے۔ اس موبائل ایپ پر صارف اور راپل کے درمیان رابطے کے بعد قریب ترین موجود گاربیج کلیکٹر گھر پہنچ جاتا ہے اور صارف کی جمع کردہ اشیا دیکھ کر اس کا اصل معاوضہ بتا دیتا ہے۔

راپل سے منسلک گاربیج کلیکٹرز کو کوڑا اٹھانے پر بونس بھی دیا جاتا ہے۔ اسی طرح خوش اخلاق اور بہتر خدمات انجام دینے والے کلیکٹر کو بھی مخصوص مدت میں بونس دیا جاتا ہے۔ راپل یہ کوڑا شہر کے گاربیج بینک کو فروخت کرتا ہے۔

یہ صرف ایک کاروبار اور تجارتی سروس نہیں ہے بلکہ ٹیکنالوجی کے ذریعے ماحول اور فطرت کی حفاظت ہے جب کہ اس کا ایک مقصد آلودگی پر قابو پانے کے لیے لوگوں میں انفرادی کوشش کا شعور اجاگر کرنا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں