The news is by your side.

Advertisement

مہندی سے مصوری کرنے والی فلسطینی خاتون

غزہ : ایسی فلسطینی خاتون جنہوں نے مہندی کو اپنے خیالات کے اظہار کا ذریعہ بنایا اور مہندی سے یروشلم میں تاریخی مقامات اور فلسطینی علاقوں کے شاندار فن پارے بنا ڈالے۔

مہندی کا رواج کئی صدیوں سے چلا آرہا ہے جو مشرقی خواتین کے بناؤ سنگہار کا جزو لازم ہے ،خوشی کی کوئی موقع ہو یا شادی بیاہ کی کوئی تقریب ہو مہندی کے بغیر کا بناو سنگھار ادھورا ہوتا ہے۔ لیکن فلسطینی خاتون نے مہندی کے ڈیزائنز کو ہاتھوں پرسے نکال کر کینوس پر بکھیر دیا۔

gaza-post-2

فلسطینی خاتون فاطمہ نے کینوس پر مہندی کا استعمال کرکے خوبصورت فن پارے بنا ڈالے، فاطمہ نے مہندی کو مصوری کے انداز کچھ اسطرح ڈھالا کہ پہلی ہی نظر میں دیکھنے والوں کی توجہ کا مرکز بن گئے۔

فاطمہ نے مہندی سے اس طرح نقش نگاری کی کہ حقیقت کا گماں ہونے لگتا ہے، مہندی سے اب تک کئی تاریخی مقامات کے پورٹریٹس بنائے ہیں۔

gaza-post-1

فلسطینی خاتون اپنے اس فن کو بین الاقوامی سطح پر آگے بڑھانے کی خواہاں ہیں۔

فاطمہ 2020 میں ہونے والی نمائش کیلئے کام کر رہی ہے ، جس کا مضمون ‘زمین اور مہندی’ ہے، انکا مقصد فلسطینیوں کی حالت زار پر توجہ دلانا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں