عدالت نے ٹرمپ کے سابق مشیر کو قید کی سزا سنا دی Russia inquiry
The news is by your side.

Advertisement

عدالت نے ٹرمپ کے سابق مشیر کو قید کی سزا سنا دی

واشنگٹن : عدالت نے امریکا کے صدارتی انتخابات میں مبینہ روسی مداخلت کے معاملے پر سیکیورٹی ایجنسی سے غلط بیانی کرکے حقائق کی پردہ پوشی کرنے پر ٹرمپ کے سابق مشیر جارج پاپا ڈولس کو 14 دن قید اور جرمانے کی سزا سنادی۔

تفصیلات کے مطابق امریکا میں دو برس قبل صدارتی انتخابات میں ہونے والی روسی مداخلت کے حوالے سے دیئے گئے بیان پر امریکی عدالت ڈونلڈ ٹرمپ کے سابق ایڈوائزر جارج پاپا ڈو پولس کو قید کی سزا سنادی۔

امریکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ جارج پاپا ڈولس امریکا کے صدارتی انتخابات کے وقت ڈونلڈ ٹرمپ کے مشیر تھے جنہوں امریکا کے سیکیورٹی ادارے ایف بی آئی سے جھوٹ بولنے اور تحقیقاتی کمیٹی کو گمراہ کرنے کے الزام میں 14 دن کی قید سنادی۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ ڈونلڈ ٹرمپ کے سابق مشیر کو سزا پوری کرنے کے بعد بھی ایک سال سیکیورٹی اداروں کی نگرانی میں گزانے میں ہوں گے، اس کے علاوہ جارج کو 200 گھنٹے کمیونٹی کی خدمت میں گزارنے ہوں گے۔

عدالتی دستاویزات کے مطابق جارج پاپا ڈولس کو 9 ہزار 500 ڈالر کا جرمانہ بھی ادا کرنا ہوگا۔

یاد رہے کہ سنہ 2016 میں امریکا کے صدارتی الیکشن میں روس کی مبینہ مداخلت پر جاری تحقیقات کے دوران جارج نے غلط بیانی سے کام لیتے ہوئے حقائق کی پردہ پوشی کی تھی۔

امریکی میڈیا کا کہنا ہے کہ انتخابات میں مبینہ مداخلت کے معاملے پر امریکی صدر کے 6 قریبی ساتھیوں کو سزا ہوچکی ہے جس میں ٹرمپ کے وکیل بھی شامل ہیں، جبکہ 13 روسی شہریوں اور 12 افسران پر کیس درج ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں