The news is by your side.

حکومت نے رات گئے عوام پر ایک اور پٹرول بم گرا دیا

وفاقی حکومت نے غربت کے مارے عوام پر ایک اور پٹرول بم گراتے ہوئے رات گئے پٹرول کی قیمت میں ایک روپے 45 پیسے کا اضافہ کردیا ہے۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق آدھی رات کو پٹرول کی قیمت میں اضافے کا نوٹیفکیشن جاری کیا گیا ہے، وزرات خزانہ کے جاری نوٹیفکیشن میں بتایا گیا ہے کہ پٹرول کی فی لیٹر قیمت میں ایک روپے 45 پیسے کا اضافہ کیا گیا ہے جس کے بعد پٹرول کی نئی قیمت 237 روپے 43 پیسے فی لیٹر ہوگئی ہے۔

حکومت کی جانب سے ڈیزل کی قیمت میں کوئی ردوبدل نہیں کیا گیا ہے اور اس کی قیمت فی لیٹر 247 روپے 43 پیسے برقرار ہے جب کہ مٹی کا تیل 8 روپے 30 پیسے فی لیٹر سستا کردیا گیا ہے جس کے بعد مٹی کے تیل کی نئی قیمت 202 روپے 2 پیسے فی لیٹر ہوگئی ہے۔

نوٹیفکیشن کے مطابق لائٹ ڈیزل کی نئی قیمت197 روپے 28 پیسےفی لیٹرمقرر کی گئی ہے اور پٹرولیم مصنوعات کی نئی قیمتوں کا اطلاق رات 12 بجے سے ہوچکا ہے۔

واضح رہے کہ شہباز حکومت نے 5 روز کی تاخیر سے پٹرولیم مصنوعات کی نئی قیمتوں کا تعین کیا ہے۔

حکومت کو اوگرا نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں کم کرنےکی تجویز دی تھی جب کہ حکومتی اتحادی جماعتوں نے بھی پٹرولیم مصنوعات میں ریلیف کامطالبہ کیا تاہم وزارت خزانہ کا پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھانے پر زور دیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: اوگرا نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں کم کرنےکی تجویز دیدی

اوگرا کی تجویز اور حکومتی اتحادیوں کے مطالبے کے بعد حکومت 4 روز تک پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کا تعین کرنے کے حوالے سے شش وپنج کا شکار رہی اور بالآخر رات گئے پٹرول کی قیمت میں اضافہ کردیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں