The news is by your side.

Advertisement

’’شہید محمد مرسی قضیہ فلسطین کے محافظ اور بے لوث سپاہی تھے‘‘

دوحہ: حماس رہنما خالد مشعل نے کہا ہے کہ شہید محمد مرسی قضیہ فلسطین کے محافظ اور بے لوث سپاہی تھے، سابق مصری صدر کے انتقال پر افسوس ہے۔

تفصیلات کے مطابق حماس رہنماء خالد مشعل نے مصر کے سابق صدر ڈاکٹر محمد مرسی کے دوران حراست انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ شہید محمد مرسی قضیہ فلسطین کے محافظ اور بے لوث سپاہی تھے۔

دوحہ میں شہید محمد مرسی کی یاد میں منعقدہ تعزیتی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے خالد مشعل نے کہا کہ غزہ اور جزیرہ نما سیناء کے حوالے سے محمد مرسی پرموجودہ مصری حکومت کی طرف سے جو الزامات عائد کیے گئے تھے ان کی کوئی حیثیت نہیں، ان الزامات کے ذریعے انہیں بلا وجہ پابند سلاسل کیا گیا۔

خالد مشعل نے کہا کہ جب محمد مرسی برسراقتدار تھے تو انہوں نے کئی مغربی اور در پردہ اسرائیلی تجاویز کو مسترد کردیا تھا۔ انہوں نے کہا تھا کہ فلسطین فلسطین ہے اور مصر مصر ہے۔

مصر نے ترک صدر کا مرسی کے قتل کا الزام مسترد کر دیا

انہوں نے کہا کہ محمد مرسی کے دور حکومت میں اسرائیل نے مغربی ممالک کے ذریعے غزہ کے علاقے کومصر کی تحویل میں لینے کی بات تجویز پیش کی گئی تھی مگر اس وقت کی اخوان المسلمون کی قیادت، حماس اور صدر محمد مرسی نے وہ تمام تجاویز مسترد کردی تھی، اس تجویز میں کہا گیا تھا کہ مصر غزہ کی تمام مشکلات اور مسائل کے حل کےلئے اپنا کردار ادا کرے اور علاقے کی مکمل ذمہ داری اٹھائے، اس کے بعد اگر غزہ سے کوئی میزائل داغا جاتا ہے تو مصر اس کا ذمہ دار ہوگا۔

خالد مشعل نے کہا کہ ڈاکٹر محمد مرسی نے اپنے دور حکومت میں کہا تھا کہ مصر کا کوئی حصہ فلسطین کے لئے اور فلسطین کا کوئی حصہ مصر کے لئے برائے فروخت نہیں ہوگا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں