امریکا میں صحت کی سہولیات پوری دنیا سے مہنگی -
The news is by your side.

Advertisement

امریکا میں صحت کی سہولیات پوری دنیا سے مہنگی

واشنگٹن: امریکا میں ہونے والے ایک سروے کےمطابق امریکی شہریوں کو میسر میں صحت کی سہولیات دیگر ترقی یافتہ کی نسبت دوگنا مہنگی ہیں،امریکی شہری اپنے روز بروز بڑھتے ہوئے ہیلتھ بلز سے پریشان ہیں۔

تفصیلات کے مطابق کیسر فاؤنڈیشن نامی ایک ادارے کی جانب سے کیے گئے ایک سروے کے مطابق وہ تمام ممالک جو یونی ورسل ہیلتھ کیئر فراہم کرتے ہیں ، ان میں امریکا سب سے مہنگا ہے۔

سروے کے مطابق ایک امریکی اوسطاً 10 ہزار 3 سو اڑتالیس ڈالر سالانہ صحت کی سہولیات حاصل کرنے کے لیے خرچ کرتا ہے جو کہ کل جی ڈی پی کا 18 فیصد ہے ، دوسری جانب دیگر ترقی یافتہ ممالک میں یہ رقم 5 ہزار 1 سو اٹھانوے امریکی ڈالر سالانہ ہے۔

رپورٹ کے مطابق یہی نہیں بلکہ زیادہ رقم کی ادائیگی کے باوجود امریکیوں کو میسر صحت کی سہولیات دیگر ترقی یافتہ ممالک سے انتہائی کم ہے، امریکیوں کے لیے موجود ڈاکٹروں کی شرح 3.9 فی کس سالانہ ہے جبکہ دیگر ممالک میں یہ شرح 7.6 فی کس ہے۔ ریسرچ کے مطابق امریکیوں کا اسپتال میں قیام بھی مختصر عرصے کے لیے ہوتا ہے یعنی 6.1 دن جبکہ دیگر ممالک میں 10.2 دن ہے۔

یہ رپورٹ یہی پر اکتفا نہیں کرتی بلکہ آگے بتاتی ہے کہ امریکا میں دواؤں کی قیمت ، انجیو پلاسٹی ، بائی پاس ، ایم آرآئی اور گھٹنے کی تبدیلی کی لاگت بھی دیگر مما لک سے دوگنا زیادہ ہے۔ جیسا کہ امریکا میں ایک گھٹنا تبدیل کرانے کی قیمت 28 ہزار 1 سو چوراسی امریکی ڈالر ہے جبکہ اسی قیمت میں آسٹریلیا میں دو گھٹنے لگوائےجاسکتے ہیں۔

دوسری جانب معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ اس اسٹڈی میں محققین نے اس حقیقت کو نظر انداز کیا ہے کہ دیگر ممالک کی نسبت امریکا میں ٹیکس کی شرح انتہائی کم ہے، بہت سے ممالک جو کہ ماں کی گود سے قبر تک میڈیکل سروسز فراہم کرتے ہیں وہ ٹیکس جی ڈی پی کا 40 فیصد ہے جبکہ امریکا میں یہ 26 فیصد ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں