The news is by your side.

Advertisement

بچوں کو گرمی دانوں سے نجات کیسے دلائی جائے؟

موسم گرما میں چھوٹے بچوں کو گرمی دانے نکل آتے ہیں جو انہیں بے حد پریشان کرتے ہیں، ویسے تو یہ خود ہی مقررہ وقت پر ختم ہوجاتے ہیں، لیکن اس سے پہلے بچے اس کی وجہ سے بہت تکلیف میں رہتے ہیں۔

گرمی دانے جلد کے بند مساموں کی وجہ سے ہوتے ہیں کیونکہ وہاں سے پسینہ نہیں نکل پاتا۔ بہت سے دوسرے عوامل بھی اس میں شامل ہو سکتے ہیں، جیسے گرم اور مرطوب آب و ہوا، ایسے لباس پہننا جو گرمی کو بڑھائے، گاڑھے لوشن اور کریم کا استعمال یا کپڑوں کی متعدد تہوں کی وجہ سے جسم کا گرم ہونا۔

چونکہ بچوں کی جلد کے مساموں کی نشوونما کم ہوتی ہے اس لیے ان میں گرمی دانے پیدا ہونے کا زیادہ امکان ہوتا ہے۔ اگرچہ گرمی دانےعام طور پر خود ہی ختم ہوجاتے ہیں، لیکن چند قدرتی نسخے بغیر کسی سائیڈ افیکٹس کے اس کے علاج کو تیز کرنے میں مدد کر سکتے ہیں۔

ایک کھیرا لیں اور اس کو کاٹ لیں، ٹکڑوں کو پیس کر گاڑھا پیسٹ بنا لیں، یہ پیسٹ 5 سے 10 منٹ کے لیے متاثرہ جگہ پر لگائیں۔

اس عمل کو 2 سے 3 دفعہ کیا جا سکتا ہے۔

کھیرے میں ٹینن اور فلیوانوائڈز شامل ہوتے ہیں جو کہ اینالجیسک اور سوزش کے خلاف کام کرنے کی خاصیت رکھتے ہیں، یہ خصوصیت بچوں میں گرمی دانوں کو پرسکون کرنے میں مدد دیتی ہے۔

ملتانی مٹی میں اس کے لیے معاون ثابت ہوسکتی ہے۔

آدھا کھانے کا چمچ ملتانی مٹی میں پانی کے ساتھ ملا کر پیسٹ بنالیں، 10 منٹ کے لیے اسے تمام متاثرہ جگہوں پر لگائیں پھر پانی سے دھو لیں۔

اسے ہر 2 سے 3 دن میں ایک بار کیا جاسکتا ہے۔

اگرچہ اس کے علاج کے مستند ہونے کے لیے کوئی تحقیق موجود نہیں ہے تاہم عمومی مشاہدہ ہے کہ ملتانی مٹی بچوں کے ساتھ ساتھ بڑوں میں بھی گرمی کے دانوں کو کم کرنے میں مدد کر سکتی ہے۔

تازہ نکالا ہوا ایلو ویرا جیل 5 سے 10 منٹ متاثرہ جگہ پر لگائیں، اور اسے پانی سے دھو لیں۔ اسے روزانہ دن میں ایک بار کیا جاسکتا ہے۔

ایلو ویرا جل کا عرق سوزش کے خلاف کام کرتا ہے، اور گرمی دانوں کو دور کرنے اوراس کی علامات کو ٹھیک کرنے میں مدد کرتا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں