The news is by your side.

Advertisement

کچھوے کے معدے میں سینکڑوں سکے

بنکاک: تھائی ڈاکٹرز نے ایک 25 سالہ کچھوے کے معدے سے سینکڑوں سکے نکال لیے۔ ان سکوں کی وجہ سے کچھوا تیرنے سے قاصر ہوچکا تھا۔

یہ کچھوا بنکاک کے ایک کنزرویشن سینٹر میں واقع ایک سوئمنگ پول میں رہتا تھا جہاں آنے والے افراد نیگ شگونی کے لیے سکے پھینکا کرتے تھے۔ کچھوے نے دیگر اشیا کے ساتھ ان سکوں کو بھی نگل لیا تھا جن کی تعداد 915 بتائی جارہی ہے۔

2

ان سکوں کو نگلنے کے بعد کچھوے کے وزن میں غیر معمولی اضافہ ہوگیا تھا جس کی وجہ سے وہ تیرنے سے قاصر ہوگیا۔

سینٹر کے ملازمین نے جب کچھوے کو غیر معمولی طور پر سست دیکھا تو اسے باہر نکال کر اس کا ٹیسٹ کیا گیا جس کے بعد اس کے اندر سکوں کی موجودگی کا انکشاف ہوا۔

5

3

ڈاکٹرز کو کچھوے کا آپریشن کر کے اس کے معدے سے سکے نکالنے میں 7 گھنٹے کا وقت لگا۔

ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ کچھوے کو صحت یاب ہونے میں ایک ماہ کا وقت لگے گا جبکہ اس کے بعد مزید 6 ماہ تک اسے زیر نگہداشت رکھا جائے گا۔

6

4

7

8

10

واضح رہے کہ کچھوؤں کے معدے میں مختلف اشیا پھنس جانے کا یہ پہلا واقعہ نہیں ہے۔ کھلے سمندر اور خشکی میں رہنے والے بے شمار کچھوے وہاں پھینکی گئی پلاسٹک کی اشیا کو خوراک سمجھ کر نگل جاتے ہیں جو ان کے جسم کے اندر پھنس جاتی ہیں۔

اس پلاسٹک کی وجہ سے کچھوے نہایت تکلیف دہ دن گزار کر اذیت ناک موت مرتے ہیں جس سے پہلے وہ کچھ کھانے کے قابل بھی نہیں ہوتے۔

ساحل سمندر پر پھینکا جانے والا کچرا نہ صرف وہاں کی آلودگی میں اضافہ کرتا ہے بلکہ وہاں موجود جنگلی و آبی حیات کے لیے بھی خطرے کا باعث ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں