The news is by your side.

حیدرآباد، سکھر موٹر وے اراضی خریداری میں اربوں روپے کا کرپشن اسکینڈل

کراچی: حیدرآباد، سکھر موٹر وے اراضی خریداری میں اربوں روپے کے کرپشن اسکینڈل پر ایف آئی اے نے تحقیقات شروع کر دی۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) نے حیدرآباد، سکھر موٹر وے اراضی خریداری میں 12 ارب روپے سے زائد کی کرپشن کے حوالے سے تحقیقات کا آغاز کر دیا۔

ڈائریکٹر ایف آئی اے سندھ زون ٹو عبدالحمید بھٹو نے ایڈیشنل ڈائریکٹر حیدرآباد اور قائم مقام ڈپٹی ڈائریکٹر ایف آئی اے شہید بے نظیر آباد کو فوری تحقیقات کی ہدایات جاری کر دیں۔

دونوں افسران کو جاری مراسلے میں انکوائری افسر کی فوری تعیناتی اور تحقیقات کے لیے کہا گیا ہے۔

فراڈ میں ملوث افسران کے بیرون ملک فرار کو روکنے کے لیے ان کے کوائف بھی ایف آئی اے امیگریشن کو ارسال کر دیے گئے، ارسال ناموں میں ڈی سی نوشہروفیروز تاشفین عالم، سابق ڈی سی مٹیاری عدنان رشید، منصور علی اور میر محمد سہاگ کے کوائف شامل ہیں۔

تاشفین عالم کا بیرون ملک فرار

واضح رہے کہ سکھر حیدرآباد موٹر وے کے لیے زمین کی خریداری کی رقم میں اربوں کی کرپشن میں ملوث ڈپٹی کمشنر نوشہروفیروز تاشفین عالم گرفتاری سے بچنے کے لیے بیرون ملک فرار ہو گئے ہیں۔

تاشفین عالم 19 نومبر کو دوپہر دو بجے غیر ملکی ایئر لائن سے دبئی فرارہوئے، سکھر حیدر آباد موٹر وے کے لیے زمین کی خریداری میں تین ارب روپے کی کرپش سامنے آئی ہے۔

ا یف آئی اے نے ڈی سی نوشہرو فیروز تاشفین عالم، ڈی سی مٹیاری عدنان رشید، سندھ بینک کے برانچ منیجر میر محمد سہاگ کا نام ای سی ایل میں شامل کرنے کی وزارت داخلہ سے درخواست کی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں