The news is by your side.

Advertisement

بھارت باز نہ آیا، اسرائیلی ٹیکنالوجی سے پاکستانی دفاعی حکام کی جاسوسی

لندن: برطانوی اخبار نے پاکستانی دفاعی اور انٹیلی جنس اہلکاروں سمیت دیگر سرکاری افسران کی اسرائیلی سافٹ ویئر کے ذریعے جاسوسی کا انکشاف کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق برطانوی اخبار کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سینئر پاکستانی دفاعی حکام اور انٹیلی جنس اہلکاروں کے فونز کو سافٹ ویئر کے ذریعے مبینہ نشانہ بنایا گیا ہے، جاسوسی کا انکشاف 1400افراد کے ڈیٹا کے تجزیے کے بعد ہوا، بھارت کا جاسوسی کے لیے اسرائیلی ٹیکنالوجی کے استعمال کا امکان ہوسکتا ہے۔

رپورٹ میں کہنا ہے کہ رواں سال 2درجن پاکستانی حکام کے افسران کے موبائل فونز کو اسرائیلی سافٹ ویئر سے نشانہ بنایا گیا، پاکستانی حکام کے فونز کے لیے اسرائیلی کمپنی کا اسپائی ویئر استعمال کیا گیا ہے۔

’’مودی پر تنقید کرنے والے صحافی اور انسانی حقوق کے کارکن کے واٹس ایپ کو بھی ٹارگٹ کیا گیا‘‘۔

برطانوی اخبار کی رپورٹ کے مطابق بھارت اسرائیلی اسپائی ویئر سے 2018میں منسلک ہوا، بھارت میں مبینہ طور پر 121واٹس ایپ صارفین کو بھی نشانہ بنایا گیا، 2017 سے فعال ایک آپریٹر کی شناخت گنگا کے نام سے ہوئی ہے، گنگا آپریٹر نے پاکستان، افغانستان اور بنگلادیش میں موبائل فونز کو متاثر کیا۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس سے قبل بھی سافٹ ویئر کے ذریعے جاسوسی کی گئی۔ وکیلوں اور سیاستدانوں کے واٹس ایپ کو بھی ٹارگٹ کیا جاچکا ہے جبکہ ہیکنگ کے شکار افراد نے مودی سرکار کو جاسوسی کا ذمہ دارقرار دیا تھا۔ جبکہ ردعمل میں انسانی حقوق کے کارکنوں نے مودی سرکار سے جاسوسی سے متعلق سوالات اٹھائے تھے، کانگریس نے جاسوسی کی سپریم کورٹ سے انکوائری کا مطالبہ بھی کیا تھا۔

بھارت جاسوسی کیلئے غباروں کے ذریعے مختلف طرح کی ڈیوائسز پاکستان بجھوانے لگا

ادھر وفاقی وزیر فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ جاسوسی سے متعلق برطانوی اخبار کی رپورٹ بہت سنجیدہ ہے، برطانوی اخبار کی رپورٹ کے بعد ہماری آنکھیں کھل جانی چاہئیں، دنیا میں ڈیجیٹل لڑائی ہے، بینک اکاؤنٹس ہیک ہورہے ہیں، واٹس ایپ ہیک ہونے کا معاملہ متعلقہ کمپنی سے اٹھانا چاہیے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ سمجھ نہیں آرہا ملک میں سائبر سیکیورٹی کو بہتر کیوں نہیں کررہے، بھارت اور اسرائیل نے واٹس ایپ گروپس کو ٹارگٹ کیا، سنجیدہ معاملہ ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں