The news is by your side.

Advertisement

بھارتی انتظامیہ کی ایک اور شرمناک کارروائی، مسلمان بیوہ کا گھر گرا دیا

سہارنپور : بھارت کی میونسپل انتظامیہ نے غریب بیوہ کو غیر قانونی طور پر گھر سے محروم کردیا، بغیر کسی حکم نامے کے مکان منہدم ہونے پر مسلم خاتون کھلے آسمان تلے زندگی گزارنے پر مجبور ہوگئی۔

بھارتی ریاست سہارنپور کے تحصیل دیوبند کے گاؤں جھبیرن میں ایک غریب خاتون کے مکان کو انتظامیہ کے افسران نے منہدم کرادیا، متاثرہ خاتون کا کہنا ہے کہ افسران کے پاس مکان منہدم کرنے کا کوئی بھی حکم نامہ بھی نہیں تھا۔

متاثرہ خاتون نے کہا کہ یہ مکان میرے مرحوم شوہر کی پوری زندگی کی کمائی تھی اور مقامی انتظامیہ کی جانب سے الاٹ کی گئی زمین پر ہی تعمیر کیا گیا تھا جبکہ انتظامیہ نے تالاب کی زمین پر مکان تعمیر ہونے کی بات کہی۔

بیوہ متاثرہ راحیلہ خاتون نے روتے ہوئے میڈیا کو بتایا کہ وہ گذشتہ بیس سال سے اس جگہ پر رہائش پذیر ہے اور یہ پلاٹ ان کے شوہر کے نام باقاعدہ الاٹ کیا گیا تھا جس کے دستاویزات بھی ان کے پاس موجود ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اگر تالاب کی زمین پر تعمیر مکان پر کارروائی ہوئی ہے تو مزید کئی مکانات بھی ہیں جو تالاب کی زمین پر ہی تعمیر ہیں۔ ان کا سوال ہے کہ ان کے ایک مکان کو ہی نشانہ کیوں بنایا گیا؟

متاثرہ خاتون نے الزام عائد کیا کہ انتظامیہ نے ان سے پانچ لاکھ روپے رشوت طلب کی تھی اور  رشوت نہ دینے پر بغیر کسی نوٹس کے مکان منہدم کر دیا گیا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق ایس ڈی ایم راکیش کمار نے اپنے تحریری بیان میں بتایا ہے کہ تحصیل کے گاؤں جھبیرن کے رہائشی معراج ولد انیس کے ذریعہ تالاب کی زمین پر قبضہ کرکے مکان بنایا گیا تھا جس کو منہدم کرکے سرکاری زمین کو خالی کروایا گیا، کارروائی کے دوران پولیس اہلکاروں اور متاثرہ خاندان کے افراد میں نوک جھونک بھی ہوئی۔

میڈیا نمائندوں نے موقع پر موجود  جب ایس ڈی ایم سے رابطہ کیا تو انہوں نے کوئی تسلی بخش جواب نہیں دیا بلکہ اسے عدالتی کارروائی قرار دے کر خاموش ہوگئے ۔

دوسری جانب گاؤں کے سربراہ عارف تیاگی کا بھی یہی کہنا ہے کہ رنجش کے تحت اس مکان کو منہدم کیا گیا ہے اس کے علاوہ اور بھی درجنوں مکانات ایسے ہیں جو تالاب اور پٹے کی زمین پر بنے ہوئے ہیں۔ یہ ضد اور سیاسی رنجش کے تحت کارروائی کروائی گئی ہے۔ بغیر کسی ہدایت اور نوٹس کے یہ کارروائی کی گئی ہے۔ پچھلے دنوں بھی ٹیم آئی تھی جو صحافیوں کو دیکھ کر بھاگ گئی تھی۔

انہوں نے کہا کہ بڑی عجیب بات ہے کہ گزشتہ ہفتے ہی ٹیم نے کہا تھا کہ یہ مکان تالاب کی زمین پر نہیں ہے لیکن اس کے باوجود یہ کارروائی کی گئی۔ اس سلسلے میں سابق رکن اسمبلی معاویہ علی نے کہا کہ تحصیل کی ٹیم نے اپنے کام کو ذمہ داری سے نہیں کیا، انہیں پہلے سروے اور پیمائش کرکے صحیح معلومات حاصل کرنی چاہئے تھی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں