مردوں کا عالمی دن: مردوں کو رول ماڈل بننے کی ضرورت -
The news is by your side.

Advertisement

مردوں کا عالمی دن: مردوں کو رول ماڈل بننے کی ضرورت

دنیا بھر میں آج مردوں کا دن منایا جا رہا ہے۔ اس دن کو منانے کا مقصد معاشرے میں مردوں کے مثبت کردار اور ان کو لاحق مسائل کا ادراک کرنا ہے۔

مردوں کا دن پہلی بار 19 نومبر 1999 کو منایا گیا، بہت کم لوگوں کو اس دن کے بارے میں علم ہے۔

رواں برس اس دن کا مرکزی خیال ہے مردوں کے مثبت رول ماڈلز۔ یہ دن اس بات پر زور دیتا ہے کہ مرد خود اور اپنے زیر تربیت نوجوانوں کو مرد ہونے کی حیثیت سے ان کی ذمہ داریاں، مثبت کردار اور اقدار کے بارے میں سکھائیں۔

مزید پڑھیں: مردانہ لباس میں ان غلطیوں سے بچیں

مردوں کے عالمی دن پر اس بات پر بھی گفتگو کی جاتی ہے کہ مردوں کو بھی ذہنی مسائل لاحق ہوسکتے ہیں جس کی وجہ خودکشی کا رجحان فروغ پا رہا ہے۔

ایک اندازے کے مطابق 45 سال سے کم عمر مردوں کی موت کی سب سے بڑی وجہ خودکشی ہے۔ اس دن مردوں کو اس بات کی بھی ترغیب دی جاتی ہے کہ وہ اپنے جذبات کو چھپانے کے بجائے ان کا اظہار کریں تاکہ ان کے ذہنی مسائل میں کمی آسکے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ 5 بیماریاں ایسی ہیں جو خواتین کی نسبت مردوں کا اپنا زیادہ شکار بناتی ہیں۔ ان میں ہائی بلڈ پریشر، ہارٹ اٹیک، پھیپھڑوں کے امراض، منہ کا کینسر اور پروسٹیٹ کینسر شامل ہیں۔

ضرورت اس بات کی ہے کہ ہم اپنے ارد گرد موجود مردوں کی ضروریات اور ان کے احساسات کا خیال کریں اور ان سے بات چیت کر کے انہیں قائل کریں کہ بحیثیت مرد ضروری نہیں ہے کہ وہ اپنے جذبات چھپائے رکھیں اور حالات کا جبر تنہا جھیلتے رہیں، اپنی پریشانیاں اپنے اہل خانہ کے ساتھ شیئر کریں اور ان کے اہل خانہ ان کو ان پریشانیوں سے نبرد آزما ہونے میں بھرپور مدد کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں