site
stats
اہم ترین

سندھ اسمبلی کی ناقص سیکیورٹی کا پول کھولنے پر’اقرارالحسن‘ گرفتار

کراچی: سرعام پروگرام کے اینکرپرسن اقرارالحسن نے سندھ اسمبلی کی سیکیورٹی انتظامات کاپول کھول دیا، جس کے ردعمل میں انہیں سراہنے کے بجائےگرفتارکرلیا گیا۔

تفصیلات کے اے آروائی نیوز کے تحقیقاتی پروگرام ’سرعام‘ کے میزبان اقرارالحسن نے آج سندھ اسمبلی میں اسٹنگ آپریشن کرتے ہوئے سیکیورٹی انتظامات میں نقائص منظرعام پرلے آئے۔

iqrar-1

اقرارالحسن سندھ اسمبلی میں اپنے ایک ساتھی کے ہمراہ لائسنس یافتہ آتشیں حملے کے ساتھ سندھ اسمبلی کے ایوان میں داخل ہونے میں کامیاب ہونے میں کامیاب ہوگئے اورحکومتی نمائندوں کو دکھایا کہ جس سیکیورٹی کے سہارے وہ یہاں بیٹھے ہیں وہ کس قدرناقص ہیں۔

سندھ کے وزیرداخلہ سہیل انور سیال نے اس موقع پربجائے یہ کہ اقرارالحسن کو سراہا جاتا ، اقرارالحسن اوران کے ساتھی کو گرفتار میں لےلیا گیا ہے۔

ویڈیو دیکھیے

وزیرداخلہ سہیل انورسیال نے ڈی آئی جی ساؤتھ مجیب شیخ کی سربراہی تحقیقاتی کمیٹی قائم کردی ہے جوکہ تحقیقات کرے گی کہ آیا سندھ اسمبلی کے عملے میں سے کوئی شخص اس کاروائی میں شریک تو نہیں ہے اور جو بھی اس معاملے میں شریک ہوگا اس کے خلاف کاروائی کی جائے گی۔

اس وقت سندھ اسمبلی کے ایک کمرے میں اقرارالحسن کو ان کے سامنے محصورکرکے رکھا گیا ہے اور اس کمرے میں آئی جی ساوٗتھ اور ایس ایس پی ساوٗتھ بھی موجود ہیں۔

ایس ایچ او آرام باغ تھانے نے مرکزی دروازے پر تالا لگوادیا ہے جبکہ عوام کی کثیر تعداد تھانے کے باہر جمع ہوگئی ہے اور اقرارالحسن کے حق میں نعرے لگارہے ہیں۔

کراچی میں سندھ حکومت کے خلاف فکس اٹ مہم کے عالمگیر خان بھی اقرارالحسن کے ساتھ اظہارِ یکجہتی کرنے کے لئےتھانے کے باہر پہنچ گئے ہیں۔

ویڈیو دیکھیے

iqrar-2

سندھ حکومت کے مطابق اقرارالحسن اور ان کے ساتھی کو سندھ اسمبلی میں اسلحہ لےکر داخل ہونے کے جرم میں باقاعدہ گرفتار کیا گیا ہے۔

 اقرار الحسن کو گرفتار کرکے ایس ایچ او آرام باغ تھانے کی تحویل میں دیا گیا ہے اور انہیں بیسمنٹ کے راستے سے ایک گاڑی کے ذریعے آرام باغ تھانے منتقل کیا گیا ہے، جہاں ان کے خلاف سندھ اسمبلی کی انتظامیہ مقدمہ درج کرائے گی۔

iqrar-3

واضح رہے کہ  اس سے قبل ریلوے کے خلاف اسی قسم کا  اسٹنگ آپریشن کرنے پر لاہورہائی کورٹ نے اپنے تاریخ ساز ریمارکس میں کہا تھا کہ ’اقرار الحسن قوم کے محسن ہیں‘ اور یہ ریمارکس دے کر اقرار اوران کے ٹیم ممبران کو باعزت بری کیا تھا۔

iqrar-4


سیاسی رہنماؤں کا ردعمل


 اس موقع پر تحریک انصاف کے رہنما عارف علوی نے اے آروائی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سندھ حکومت اپنی ناکامی کا ملبہ دوسروں پرڈال رہی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگر سندھ اسمبلی میں پستول آسکتی ہے تو پھر کوئی بھی محفوظ نہیں ہے۔

ایم کیو ایم کے رہنما سلمان مجاہد بلوچ خواجہ اظہار نے اقرارالحسن کی گرفتاری کی شدید مذمت کی اور کہا کہ سندھ حکومت عوام کو تحفظ دینے میں ناکام ہوچکی ہے اوراب خود حکومت بھی محفوظ نہیں ہے۔


وزیراعلیٰ سندھ کا ردعمل


 وزیراعلیٰ سندھ قائم علی شاہ نے اس حوالے سے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہ سندھ اسمبلی کی سیکیورٹی کے انچارج اسپیکراسمبلی آغا سراج درانی ہیں اورانہی کے فیصلے پر حکومت عمل درآمد کرے گی۔


صحافتی تنظیموں کی مذمت اوراحتجاج


اے آروائی نیوز کے اینکر پرسن اور اُن کی ٹیم کی گرفتاری پر ملک بھر کی صحافتی تنظیموں نے مذمت کی ہے، صحافتی تنظیموں نے اقرارالحسن کو فوری طور پر رہا کرنے کا مطالبہ بھی کیا۔

ملک بھر میں صحافتی تنظیموں نے شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ حکومت سیکیورٹی کے حالت بہتر بنانے کے بجائے صحافیوں کو نشانہ بنارہی ہیں۔

سوات پریس کلب نےسر عام ٹیم اور اقرارالحسن کی گرفتاری بزدلانہ اقدام قرار دیا۔

گوجرانوالہ پریس کلب میں صحافیوں نے شدید احتجاج کرتے ہوئے اقرارالحسن کی فوری رہائی کا مطالبہ کردیا۔

سکھر یونین آف جر نلٹس نے احتجاج کی کال دے دی۔
راولپنڈی میں کرائم رپوٹرز کی جانب سے شدید الفاظ میں مذمت کی۔

کراچی سے خیبر تک اس وقت صحافتی تنظیمیں سندھ حکومت کے اقدام کو شدید تنقید کا نشانہ بنا رہی ہیں ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اقرارالحسن ٹوئٹر کے ٹاپ ٹرینڈ میں شامل، شہریوں کا خراج تحسین

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اقرارالحسن کی گرفتاری کی خبر ٹوئٹر پر بھی ٹاپ ٹرینڈ بن چکی ہے۔عوام نے اقرار الحسن کی حمایت میں ہزاروں ٹوئٹس کیں۔ پاکستان اسٹینڈ ود اقرار، اقرار الحسن کورہاکیاجائے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر کے یوزرز نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے اقرار الحسن سے اظہار یکجہتی کیا۔ اے آر وائی نیوزکے پروگرام سرعام کے اینکرپرسن اقرارالحسن نے سندھ اسمبلی سیکورٹی کابھانڈاپھوڑا تو صلے میں ان کو حوالات میں پہنچادیاگیا۔

اقرارالحسن کی گرفتاری کی خبرنے انٹرنیٹ یوزرس کوبھی پریشان کردیا۔ ٹوئٹر پر وی سپورٹ اقرارٹاپ ٹرینڈبن گیا۔ عمیر علی خان نے اپنی ٹوئٹ میں لکھااقرار کورہاکیاجائے، وہ حقیقی ہیرو ہیں۔

اقرار نے سندھ اسمبلی کے سچ کاانکشاف کیا۔ اسلم طاہر نےکہاکہ اقرارالحسن ٹھنڈے کمرے میں بیٹھ کرباآسانی پروگرام کرسکتے تھے مگرانہوں نے حکومت کی نااہلی کو بے نقاب کرنے کے لئے جدوجہد کی۔ ٹوئٹرز یوزرس نے اقرار الحسن کی حمایت کے ساتھ ساتھ حکومت کو بھی آڑے ہاتھوں لیا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top