The news is by your side.

Advertisement

ایران کا مغرب کو دوٹوک انکار

ایران نے مغرب کو اپنا تیل فروخت کرنے سے انکار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایران کے پاس تین کے نئے خریدار موجود ہیں۔

ایرانی تیل کی صنعت کے قومی دن کے موقع پر مقامی ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے ایران کے وزیر پٹرولیم جواد اوجی نے کہا کہ ایران پرعائد پابندیوں کے باوجود ہم اپنا تیل نئے خریداروں کو بیچ سکتے ہیں کیونکہ ہم پر عائد پابندیوں اور ہماری برآمدات کو صفر کرنے کی دشمن کی کوششوں کے باوجود ایرانی خام تیل کی برآمدات میں اضافہ ہوا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایرانی خام تیل کی برآمدات میں وزارت تیل کے ملازمین کی کوششوں کی بدولت اضافہ ہوا ہے اور آنے والے سالوں میں خام تیل اور گیس کنڈینسیٹ کی ہماری یومیہ پیداواری صلاحیت 4 ملین بیرل نہیں رہے گی اور منصوبے کے مطابق یہ تعداد 5 ملین 700 ہزار بیرل یومیہ تک پہنچ جائیگی۔

انہوں نے بتایا کہ حجم کے لحاظ سے گزشتہ سال کے مقابلے میں ہمارے تیل کی برآمدات میں اضافہ ہوا اور بین الاقوامی قیمتوں میں اضافے سے ہماری تیل کی آمدنی بھی بڑھی۔

اوجی نے مزید کہا کہ اس وقت ایرانی پیٹرو کیمیکل صنعت کی پیداواری صلاحیت 68 پیٹرو کیمیکل کمپلیکس میں تقریباً 90 ملین ٹن ہے جو کہ اگلے چار سالوں میں 140 ملین ٹن تک پہنچ جائے گی، جس میں سے زیادہ تر تکمیلی صنعتوں سے پیٹرو کیمیکل صنعت تک پہنچ جائے گی۔2021 کے مقابلے میں خام تیل، گیس کنڈینسیٹ، پیٹرولیم مصنوعات اور پیٹرو کیمیکلز کی فروخت اور برآمدات سے کیش وصولیوں میں تقریباً 2.5 گنا اضافہ ہوا ہے اور ہم نے گزشتہ سال کے مقابلے خالص قدرتی گیس کی برآمدات میں بھی اضافہ دیکھا۔

ان کا کہنا تھا کہ اس وقت ایرانی پیٹروکیمیکل صنعت کی پیداواری صلاحیت 68 پیٹرو کیمیکل کمپلیکس میں تقریباً 90 ملین ٹن ہے جو کہ اگلے چار سالوں میں 140 ملین ٹن تک پہنچ جائے گی، جس میں سے زیادہ تر تکمیلی صنعتوں سے پیٹرو کیمیکل صنعت تک پہنچ جائے گی۔

ایرانی وزیر پٹرولیم نے کہا کہ وزارت تیل کے لیے نئے خریداروں کی تلاش میں ہے اور اس سلسلے میں وہ اپنی تمام داخلی اور بیرونی صلاحیتوں کو بروئے کار لاتی ہے اور اپنے معاہدوں کو متنوع بناتی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں