The news is by your side.

Advertisement

اٹلی کا روسی گیس کی ادائیگی روبل میں کرنے کا فیصلہ

روم: اٹلی کی توانائی فرم نے روسی گیس کی ادائیگی روبل میں کرنے کا فیصلہ کیا ہے، اس مقصد کے لییے ماسکو کے بینک میں اکاؤنٹ قائم کیا جارہا ہے۔

بین الاقوامی میڈیا کے مطابق اطالوی توانائی فرم ای این آئی روسی گیس کے لیے روبل کی ادائیگی کے لیے Gazprombank میں ایک اکاؤنٹ قائم کرنے کی تیاری کر رہی ہے۔

یورپی یونین کی جانب سے پولینڈ اور بلغاریہ کو گیس کی سپلائی بند کرنے کے روس کے فیصلے پر تنقید کرنے کے بعد کمپنیوں کو خبردار کیا گیا، روس کے مطالبات کی تعمیل کرتے ہوئے پابندیوں کی خلاف ورزی کے خلاف اب اٹلی کو بھی روسی گیس کی قیمت روبل میں ادا کرنی ہوگی۔

ای این آئی کا روسی بینک میں روبل اکاؤنٹ کھولنے کا فیصلہ ایک احتیاطی اقدام ہے جو اسے روسی صدر ولادی میر پوٹن کے حکم کی تعمیل کرنے کی اجازت دے سکتا ہے کہ غیر دوست ممالک گیس کی روسی کرنسی میں ادائیگی کریں۔

یورپ کی کمپنیاں اس معاملے پر یورپی یونین کے حکام سے مزید رہنمائی کی کوشش کر رہی ہیں لیکن رپورٹ کے مطابق روسی گیس کی ایک اور بڑی خریدار جرمنی کی یونیپر کمپنی کا خیال ہے کہ وہ بغیر کسی اصول کی خلاف ورزی کیے روسی گیس کی خریداری جاری رکھ سکتی ہے۔

خیال رہے کہ روس نے یورپی ممالک کو گیس کی قیمت صرف روبل میں وصول کرنے کی شرط عائد کی تھی کیونکہ یورپی ممالک نے یوکرین میں جاری روس کے فوجی آپریشن کے بعد روس کے خلاف پابندیاں عائد کی تھیں۔

مشرقی یوکرین کا بحران اس وقت شروع ہوا جب یوکرینی حکام نے ان علاقوں میں فوجی طاقت سے کام لینے کی کوشش کی، جنگ بندی پرعمل نہیں کیا، دونباس میں عام شہریوں کا قتل عام نہیں رکوایا اور اس علاقے کے لوگوں کا محاصرہ کرلیا۔

روس بارہا یوکرین کو اسلحے کی فراہمی، انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر توجہ نہ دینے اور مشرقی یوکرین کے روسی نژاد باشندوں پر یوکرینی فوج کے حملوں کے بارے میں مغربی ملکوں کو سخت خبردار کر چکا ہے۔

مغربی ممالک اور خاص کر امریکا حالیہ برسوں کے دوران یوکرین کو بڑے پیمانے پر مالی اور عسکری امداد فراہم کرتا رہا ہے، مشرقی علاقوں میں جنگ شروع ہونے کے بعد اس نے جنگجو بھی بھیجنا شروع کردیے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں