The news is by your side.

Advertisement

کرونا ویکسین کے ضمنی اثرات، جاپان کا بڑا فیصلہ

ٹوکیو: دنیا بھر میں کرونا ویکسین ‘موڈرنا’ کے سائیڈ ایفیکٹ کے سامنے آنے کے باعث جاپان نے بڑا فیصلہ کیا ہے۔

جاپان کے صحت کے حکام نے تصدیق کی ہے کہ موڈرنا ویکسین کے باعث دل کی سوزش کے معاملے پر اب بیس سال اور اس سے کم عمر افراد کو موڈرنا کے بجائے ‘فائزر’ ویکسین لگانے کی تیاری کی جارہی ہیں۔

حکام کے مطابق یہ اقدام اس تناظر میں اٹھایا گیا ہے کہ جب کووِڈ نائنٹین کی موڈرنا ویکسین خصوصاً نوجوان مردوں میں دل کے پٹھے اور دل کے ارد گرد تھیلی نما غلافِ قلب کی سوزش جیسے ضمنی اثرات کا باعث بنی۔

جاپان کی وزارت صحت کی جانب سے جاری اعدادوشمار کے مطابق بارہ ستمبر تک موڈرنا ویکسین کے ضمنی اثرات کا تناسب کچھ یوں تھا، بیس سال کے افراد( فی دس لاکھ میں 17.1 فیصد) جبکہ اس سے کم عمر کے جوانوں میں 21.6 فیصد تھا۔

اس کے مقابلے میں فائزر ویکسین کی خوراک لگوانے بیس سالہ نوجوانوں میں یہ شرح فی دس لاکھ 13.1 اور بیس سال سے کم عمر والوں میں 1.9 رپورٹ کی گئی تھی۔

یہ بھی پڑھیں: کرونا وائرس: جاپان نے نئے طریقہ علاج کی منظوری دے دی

جاپانی وزارت کے حکام نے واضح کیا کہ یہ واقعات کبھی کبھار ہوتے ہیں ان کی علامات ہلکی ہیں اور یہ کہ خطرات کے مقابلے میں ان کے فوائد کہیں زیادہ ہیں۔

ساتھ ہی وزارت یہ مشورہ دینے پر غور کر رہی ہے کہ ان گروپوں کے مردوں کو خطرات سے متعلق بتایا جائے اور موڈرنا کے بجائے فائزر ویکسین لگانے کی پیشکش کی جائے، اُن کا کہنا ہے کہ یہی مشورہ پہلی مرتبہ موڈرنا ویکسین کا ٹیکہ لگوانے والے مردوں کو بھی دیا جائے گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں