The news is by your side.

Advertisement

کُشتی کے تمام مقابلوں کا فاتح پاکستانی پہلوان حاسدین سے ہار گیا‌

کشتی یا پہلوانی ہندوستان کا ایک مقبول کھیل رہا ہے جسے اکھاڑے میں فتح و شکست سے ہٹ کر بھی جسمانی صحت، طاقت، چستی و پھرتی برقرار رکھنے کا ذریعہ اور نہایت مفید و مثبت سرگرمی تصور کیا جاتا تھا۔ اس کھیل میں پاکستان سے کئی کھلاڑی نام ور ہوئے اور دنیا بھر میں پہچانے گئے۔ محمد زبیر عرف جھارا پہلوان انہی میں‌ سے ایک ہیں‌ جن کی آج برسی ہے۔

10 ستمبر 1991 کو لاہور میں‌ پاکستان کے اس مشہور پہلوان کا انتقال ہوگیا تھا۔ جھارا پہلوان 1960 میں پیدا ہوئے تھے۔ وہ اس خاندان کے چشم و چراغ تھے جو پہلوانی اور اکھاڑے میں‌ اترنے کے لیے مشہور رہا۔ جھارا، اسلم پہلوان کے بیٹے، بھولو پہلوان کے بھتیجے، امام بخش پہلوان کے پوتے اور گاما کلو والا پہلوان کے نواسے تھے۔

27 جنوری 1978 کو پہلا مقابلہ لڑنے کے لیے اکھاڑے میں اترنے والے جھارا نے گوگا پہلوان کو چت کرکے فتح اپنے نام کی تھی۔ اگلے برس 1979 جاپان کے مشہور پہلوان انوکی کے ساتھ مقابلہ کیا اور اس کشتی کے پانچویں رائونڈ کے بعد جاپانی پہلوان نے جھارا کے ہاتھ کو اوپر اٹھائے اور اسے فاتح قرار دے دیا۔

جھارا پہلوان نے 60 کے قریب مقابلوں میں‌ حصّہ لیا اور ہر بار فتح اپنے نام کی۔ فخرِ پاکستان اور رستمِ پاکستان کے خطابات پانے والے جھارا پہلوان کی ان کام یابیوں‌ نے حاسدوں کو سازش پر آمادہ کیا اور انھوں نے جھارا کو منشیات کے استعمال کا عادی بنا دیا۔ بدقسمتی سے جھارا پہلوان زندگی کی فقط 31 بہاریں‌ دیکھ سکے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں