کراچی میں جعلی اکاؤنٹس کے بعد بے نامی جائیداد کا سراغ لگالیا گیا karachi fake plots
The news is by your side.

Advertisement

کراچی میں جعلی اکاؤنٹس کے بعد بے نامی جائیداد کا سراغ لگالیا گیا

کراچی: شہر قائد میں جعلی اکاؤنٹس اور جعلی کمپنیوں کے بعد بے نامی جائیداد کا سراغ لگالیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے میں جعلی اکاؤنٹس اور جعلی کمپنیوں کا سلسلہ تھما نہ تھا کہ اب بے نامی جائیداد بھی سامنے آگئی ہے، کلفٹن میں 52 ارب روپے کے پانچ مہنگے ترین پلاٹ بے نامی اکاؤنٹس سے خریدے گئے۔

ذرائع کے مطابق کلفٹن میں پلاٹس کی تفصیلات کے ڈی اے اور ماسٹر پلان ڈیپارٹمنٹ سے طلب کرلی گئی۔

دوسری جانب پشاور کے چوک یادگار میں ایف آئی اے نے کامیاب کارروائی کرتے ہوئے ہنڈی و حوالہ میں ملوث 2 ملزمان کو گرفتار کرکے رقم برآمد کرلی۔

مزید پڑھیں: ایک اور شخص راتوں رات کروڑ پتی بن گیا، اکاؤنٹ میں کروڑوں روپے آگئے

واضح رہے کہ شہر قائد کے رہائشی فالودہ فروش عبدالقادر کے اکاؤنٹ میں 2 ارب روپے آگئے تھے جس کی تحقیقات ایف آئی اے نے شروع کردی تھی، فالودہ فروش کا کہنا تھا کہ ایف آئی اے نے پوچھ گچھ کے لیے طلب کیا ہے۔

فالودہ بیچنے والے شہری نے مزید کہا تھا کہ ’مجھے جو دستخط دکھائے گئے وہ انگریزی میں ہیں، جب کہ میں انگوٹھا چھاپ ہوں، انگریزی میں دستخط نہیں کر سکتا۔‘

خیال رہے کہ جھنگ کے طالب علم اسد علی کے اکاؤنٹ میں 17 کروڑ 30 لاکھ روپے موجود ہونے کا انکشاف ہوا تھا جس کے بعد ایف آئی اے ٹیم مذکورہ طالب علم کو جھنگ سے لے کر کراچی روانہ ہوگئی تھی۔

اسد علی بی ایس سی کا طالب علم ہے، اسد علی کا کہنا تھا کہ کراچی آج تک نہیں دیکھا، اب تحقیقات کے لیے بلایا گیا ہے، اتنی بڑی رقم سے کوئی تعلق نہیں ہے میری مدد کی جائے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں