The news is by your side.

Advertisement

اختیارات کی جنگ نے کراچی کو ڈبو دیا، بجلی 12 سے 15 گھنٹے سے غائب

کراچی: سندھ لوکل باڈی ایکٹ کے تحت اختیارات کی جنگ نے کراچی کو ڈبو دیا اور مختلف علاقوں میں کے الیکٹرک کی نااہلی کے سبب بجلی 12 سے 15 گھنٹے سے غائب ہے۔

تفصیلات کے مطابق سندھ لوکل باڈی ایکٹ کے تحت اختیارات کی جنگ نے باران رحمت کو زحمت میں بدل دیا اور کے الیکٹرک نے جلتی پر تیل کا کام کیا ہے، مختلف علاقوں میں بجلی کی فراہمی 12 سے 15 گھنٹے سے معطل ہے۔

بارش کے دوران صوبائی وزراء اور بلدیاتی نمائندوں کے دورے نمائشی نکلے ہیں، کراچی کی اہم شاہراہیں تاحال پانی میں ڈوبی ہوئی ہیں، 50 ملی میٹر بارش کے بعد صورت حال سندھ حکومت کے بس سے باہر ہے۔

شہر کے مختلف علاقوں کی گلیاں اور لنک روڈ تالاب میں بدل گئے ہیں، حکومتی مشینری غائب، پانی کھینچنے والے پائپ بھی ناکارہ ہوگئے، شہر کی اہم شاہراہوں سے واٹر اینڈ سیوریج بورڈ کا عملہ بھی غائب ہے۔

مزید پڑھیں: کراچی، بارش کے دوران مختلف واقعات میں 8 افراد جاں بحق، 6 افسران معطل

دوسری جانب کے الیکٹرک کی روایتی کارکردگی برقرار ہے اور مختلف علاقوں میں 12 سے 15 گھنٹے سے بجلی غائب ہے، گلشن اقبال، حسن اسکوائر میں 8، 8 گھنٹوں سے بجلی غائب ہے۔

اسی طرح گلشن فیصل، باتھ آئی لینڈ میں صبح 6 بجے سے بجلی کی فراہمی معطل ہے، ملیر کے علاقے میں 12 گھنٹے سے بجلی غائب ہے، گلستان جوہر، صفورہ چورنگی، سہراب گوٹھ کے علاقے میں بجلی نہ ہونے کی وجہ سے عوام کو مشکلات کا سامنا ہے۔

ادھر حیدرآباد میں موسلا دھار بارش سے نکاسی آب کا نظام مفلوج ہوگیا، وزیراعلیٰ سندھ نے واسا، ضلعی حکومت کی ناقص کارکردگی کا نوٹس لیتے ہوئے کہا ہے کہ نشیبی علاقوں کے مکینوں کی مدد کی جائے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں