The news is by your side.

Advertisement

جسٹس (ر) کاظم ملک نے راناثناء اللہ کے الزامات مسترد کردیئے

لاہور : این اے ایک سوبائیس دھاندلی کیس کا فیصلہ دینے والے الیکشن ٹریبونل کے جج جسٹس ریٹائرڈ کاظم ملک نے پنجاب کے وزیر قانون راناثناء اللہ کے الزامات مسترد کردیئے۔

انہوں نے صوبائی وزیرقانون کو چلینج کیا کہ وہ الزامات کے ثبوت دیں، تفصیلات کے مطابق الیکشن ٹریبونل کے جج جسٹس ریٹائرڈ کاظم ملک نے راناثناء اللہ کے الزامات کو یکسر مسترد کردیاہے۔

وزیر قانون پنجاب رانا ثناءاللہ نے ایک پریس کانفرنس میں الزام لگایا تھا کہ جسٹس کاظم اپنےبیٹے کو الیکشن میں ٹکٹ دلوانا چاہتے تھے۔

جسٹس کاظم فیصلہ تعصب پر مبنی ہے،جسٹس کاظم کو ن لیگ سےپرانی عداوت ہے، جس کے جواب میں جسٹس کاظم ملک نے رانا ثنا ءاللہ  کے الزامات کو جھوٹ کا پلندہ قرار دیتے ہوئے جواب دیا کہ رانا ثنا اللہ اُن کے بیٹے کی طرف سے دی گئی پارٹی ٹکٹ کی درخواست کی کاپی فراہم کریں۔

انہوں نے کہا کہ رانا ثناء اللہ ثبوت دیں،سب کےسامنےمعافی مانگوں گا،انہوں نے کہا کہ تعصب کاجواب مانگنے کےلئے پرویزرشید کوخط لکھ دیاہے، جواب کا انتظار ہے۔

جسٹس کاظم ملک نے کہا کہ کیا خواجہ آصف،دانیال عزیز،روحیل اصغر کےحق میں فیصلے راناثناء کے دباؤ پر دیئے؟؟ 30فیصلے ن لیگ کےحق میں دیئے تو ایک پر اختلاف کیوں؟

ان خیالات کا اظہار جسٹس ریٹائرڈ کاظم  ملک نے اے آر وائی نیوز کے پروگرام آف دی ریکارڈ میں کیا ۔

علاوہ ازیں الیکشن ٹریبونل کے جج جسٹس ریٹائرڈ کاظم ملک کے خلاف حکومتی وزراء کی سخت زبان پر ان کی سیکیورٹی بڑھا دی گئی ہے ۔

جسٹس ریٹائرڈ کاظم نے ملک نے اے آر وائی نیوز کے پروگرام آف دی ریکارڈ میں تحفظات کا اظہار کیا تھا جس پر سیکیورٹی ادارے حرکت میں آئے ۔

جسٹس کاظم علی ملک کی سکیورٹی کے لئے لاہور میں ان رہائش گاہ کے اردگرد سفید کپڑوں میں ملبوس اہلکار تعینات کردیئے گئے ہیں ۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ انصاف کرنے والے جج صاحبان کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے یہ اقدامات کئے گئے ہیں ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں