The news is by your side.

Advertisement

کراچی ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے ملازمین کئی ماہ سے تنخواہوں سے محروم

کراچی: کراچی ڈیولپمنٹ اتھارٹی (کے ڈی اے) کے ملازمین کئی ماہ سے تنخواہوں سے محروم ہیں اور من پسند افراد کو کئی کروڑ کا قرضہ دے دیا گیا۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق کے ڈی اے میں اندھیر نگری چوپٹ راج ہے، ملازمین کئی ماہ سے تنخواہوں سے محروم ہیں اور من پسند افراد کو کئی کروڑ کا قرضہ دے دیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق قرض لینے والے ملازمین کی اکثریت کے خلاف نیب، اینٹی کرپشن میں کیسز چل رہے ہیں، قرض کی منظوری کس نے دی اس کا کے ڈی اے فنانس ڈیپارٹمنٹ میں کوئی ریکارڈ موجود نہیں ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ افسران نے عارضی ایڈوانس کی نئی اصلاح بھی متعارف کرائی ہے، قرضہ لینے والے افسر نے کئی سال بعد بھی ایک روپیہ واپس نہیں کیا ہے۔

مزید پڑھیں: کراچی : کے ڈی اے میں جعلی ٹینڈرز جاری کئے جانے کا انکشاف

نمائندہ اے آر وائی نیوز کے مطابق کے ڈی اے ملازمین 4 ماہ سے تنخواہوں سے محروم ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اسسٹنٹ سیکریٹری جنرل شکیل صدیقی نے 10 لاکھ سے زائد قرض لیا جبکہ کوآرڈینیٹر اکرم ستار نے 14 لاکھ سے زائد کا قرض لیا ہے۔

واضح رہے کہ 4 جنوری 2020 کو جعلی دستخط کے ذریعے کے ڈی اے کے ٹینڈرز جاری کیے جانے کا انکشاف ہوا تھا، سندھ کے وزیر بلدیات نے ملوث افسران کے خلاف کارروائی کے لیے محکمہ اینٹی کرپشن کو خط ارسال کیا تھا۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں