site
stats
سندھ

الزامات پرعدالتوں کا سامناکرنےکی جرات ہے،خواجہ اظہارالحسن

کراچی : ایم کیوایم رہنما خواجہ اظہارالحسن اپنی گرفتاری کے خلاف قانونی چارہ جوئی نہ کرنے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا کہ راؤ انوار کے خلاف نیک نیتی سے کارروائی ہو نی چاہیے۔

تفصیلات کے مطابق سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف خواجہ اظہارالحسن نے اپنی گرفتاری کےخلاف قانون کا دروازہ نہ کھٹکھٹانےکا اشارہ دیتے ہوئے کہا کہ میرے پاس آوازبلندکرنےکیلئےاسمبلی کاپلیٹ فارم موجودہے۔

انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیشی کےموقع پرایم کیوایم رہنما نےکہا حراست میں لینے بعد ٹارگٹ کلرزکا سربراہ بنادیا گیا اور چیف کا لقب بھی دے دیا گیا جب کہ تفتیش کے نام پر تذلیل کی گئی اور چھاپہ مارکارروائی کو چادراورچاردیواری کےتقدس کےخلاف قراردیا۔

اسی سے متعلق : پولیس کے ہاتھوں خواجہ اظہار گرفتار، ایس ایس پی راؤ انوار معطل

انہوں نے کہا کہ مجھے گھر ایسے حراست میں لیا گیا جیسے میں انتہائی مطلوب ملزم ہوں زبان کی بنیاد پر غدارقرار دینا ظلم ہے الزامات پرعدالتوں کا سامناکرنےکی جرات ہے الزام جتنا بھی بڑا ہو سامنا کریں گے عدالتوں پر مکمل اعتبار ہے۔

بعد ازاں اپوزیشن لیڈر خواجہ اظہارالحسن کے وکیل نےمزید چارمقدمات کی نقول حاصل کرکےعبوری ضمانت کیلئےتیاری شروع کردی ہے۔

واضح رہے کہ اپوزیشن لیڈر خواجہ اظہار الحسن کو گزشتہ روز اُن کے گھر سے ایس ایس پی ملیر راؤ انوار نے گرفتار کیا تھا جس کے بعد وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کی مداخلت کے بعد انہیں رہائی ملی تھی جب کہ راؤ انوار کو معطل کردیا گیا تھا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top