The news is by your side.

Advertisement

شمالی کورین سربراہ 20 دن بعد عوام میں دیکھے گئے، موت کی افواہیں دم توڑ گئیں

پیانگ یانگ: کم جونگ اُن کی موت سے متعلق تمام افواہیں دم تور گئیں، شمالی کوریا کے سربراہ 20 دن بعد پہلی مرتبہ عوام میں دیکھے گئے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق شمالی کوریا کے ڈکٹیٹر کم جونگ اُن بیس دن بعد عوام میں نکل آئے، انھوں نے ایک فرٹیلائزر پلانٹ کا فیتہ کاٹا، بہن بھی ان کے ہمراہ تھیں، جن کے بارے میں کہا جا رہا تھا کہ بھائی کی موت کے بعد انھوں نے اقتدار سنبھال لیا ہے۔

کم جونگ اُن کے سامنے آنے سے ان کی موت سے متعلق تمام افواہیں دم توڑ گئی ہیں، انھوں نے جنوبی پیانگن کے شہر سنچن میں ایک فرٹیلائزر فیکٹری کا فیتہ کاٹا، ریاستی میڈیا نے اس تقریب کی تصاویر بھی جاری کیں، جن میں کِم ساتھیوں کے ساتھ مسکراتے ہوئے بات کرتے نظر آتے ہیں، تاہم دیگر میڈیا کا کہنا ہے کہ ان تصاویر کی صداقت کی تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔

شمالی کوریا کے سربراہ سے متعلق کیا کیا افواہیں پھیلائی گئیں؟

کورین سینٹرل نیوز ایجنسی کے مطابق اس موقع پر کئی سینئر شمالی کورین عہدے داروں سمیت چھوٹی بہن کم یو جونگ بھی ان کے ہمراہ تھیں۔ یاد رہے کہ کم جونگ اُن کی صحت سے متعلق اس وقت افواہیں گردش کرنے لگی تھیں جب 15 اپریل کو وہ ریاست کے بانی کِم اِل سَنگ کے یوم پیدایش کی تقریبات میں شریک نہیں ہوئے۔ وہ ہر سال اپنے دادا کے مقبرے پر ضرور حاضری دیا کرتے تھے، اس سے قبل آخری مرتبہ وہ 11 اپریل کوورکرز پارٹی کی ایک تقریب میں شریک ہوئے تھے۔

ان کی صحت سے متعلق میڈیا دو حصوں میں تقسیم تھی، ایک کا کہنا تھا کہ کم جونگ اُن مر چکے ہیں، جب کہ دوسرے کا کہنا تھا کہ وہ کوما میں ہیں۔ تاہم اب شمالی کوریا کے ساتھ معاملات کو دیکھنے والے جنوبی کورین وزیر کم یوآن چُل نے قیاس آرائی کی ہے کہ کم جونگ کرونا وائرس کی وبا کی وجہ سے احتیاطاً سامنے نہیں آ رہے تھے۔

کم جونگ اُن کے سامنے آنے والی رپورٹ پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے جب سوال پوچھا گیا تو انھوں نے جواب میں کہا کہ میں فی الوقت اس پر تبصرہ نہیں کروں گا، جب درست وقت آئے گا تو ہم اس سے متعلق کچھ کہیں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں