خیبر پختونخوا: بچوں کو اسکول نہ بھیجنے والے والدین کو قید کرنے کا فیصلہ KPK education
The news is by your side.

Advertisement

خیبر پختونخوا: بچوں کو اسکول نہ بھیجنے والے والدین کو جیل بھیجنے کا فیصلہ

پشاور: خیبر پختون خوا حکومت نے بچوں کو اسکول نہ بھیجنے والے والدین کو قید کی سزا دینے کا فیصلہ کرلیا، پرائمری تا سیکنڈری تعلیم لازمی قرار دی جائے گی جو حکومت مفت فراہم کرے گی۔

اے آر وائی نیوز کی نمائندہ پشاور شازیہ نثار کے مطابق خیر پختون خوا حکومت نے پرائمری سے سیکنڈری تک تعلیم لازمی قرار دینے کے لیے مسودہ تیار کرلیا جس کے تحت تمام بچوں کو پرائمری تا سیکنڈری تعلیم حکومت کی جانب سے فراہم کی جائے گی جو کہ بالکل مفت ہوگی۔

اس مسودے کی منظوری کے بعد 5 سے 16 سال تک کے بچوں کے والدین اپنے بچوں کو اسکول بھیجنے کے پابند ہوں گے بصور ت دیگر انہیں سزا کا مرتکب قرار دیا جائے گا۔


سزا کے طور پر اسکول نہ بھیجنے والے والدین کو یومیہ سو روپے جرمانہ عائد کرتے ہوئے انہیں 30 دن تک قید کرنے کی سزا بھی تجویز کی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: کے پی کے کا انقلابی اقدام، اسکول میں قرآنی تعلیم لازمی قرار

کے پی کے حکومت شعبہ تعلیم میں بہتری لانے کے لیے مسلسل اقدامات میں مصروف ہے،قبل ازیں 18 جنوری کو خیبر پختونخوا حکومت نے سرکاری اسکولوں میں پہلی سے پانچویں جماعت تک قرآن مجید کی تعلیم کو لازمی جبکہ چھٹی جماعت سے میٹرک کے بچوں کو قرآن مجید ترجمے کے ساتھ پڑھانے کی تعلیم کو لازم قرار دیا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں