The news is by your side.

Advertisement

شوگر کا علاج بھنڈی سے: مگر کیسے ؟

بھنڈی وٹامنز، معدنیات، منفرد تکسیدی مادوں یا اینٹی آکسیڈنٹس اور دیگر غذائی اجزاء سے بھرپور سبزی ہے۔ جس سے کئی بیماریوں کا علاج ممکن ہے، خاص طور پر ذیا بیطس کے علاج اور گردے کی بیماریوں کے لیے بھنڈی بہت فائدہ مند ہے۔

بھنڈی ایک عام سبزی کے طور پر گھروں میں استعمال ہوتی ہے اگر اسے ایک خاص ترکیب سے استعمال کیا جائے تو شوگر جیسے ایک انتہائی پریشان کن مرض  سے بچاؤ  و علاج میں معاون ہوسکتی ہے۔

لیکن آپ یہ جان کر حیران ہوں گے کہ اس کا پانی کئی بیماریوں مثلآ ذیابیطس، دمہ، کولیسٹرول اور گردے کی بیماریوں میں بہت خوبی کے ساتھ فائدہ مند ہے کیونکہ بھنڈی میں وٹامنز، منرلز، پوٹاشیم، کیلشیم اور فولک ایسڈ ایک خاص مقدار میں پایا جاتا ہے جو ذیابیطس کا شکار ہونے والوں کے لئے نہایت مفید ہے اس کے لئے شوگر کے مریضوں کو چاہیے کہ وہ اس کا باقاعدگی سے استعمال کریں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ بھنڈی ایک ایسی سبزی ہے جو حیرت انگیز طور پر شوگر کم کرنے کی خصوصیات سے مالامال ہے، یہ شوگر کو کنٹرول کرنے، وزن کم کرنے اور جوڑوں میں لیس پیدا کرنے کے لئے بہترین ہے۔

اگر مخصوص طریقے سے بھنڈی کا استعمال کیا جائے تو شوگر لیول کم کرنے میں کردار ادا کرتی ہے ماہرین اسے استعمال کرنے کے کیا طریقہ بتاتے ہیں آئیے جانتے ہیں۔

شوگر کم کرنے کے لئے بھنڈی کا استعمال

شوگر کنڑول کرنے کے لئے دو سے تین عدد بھنڈی رات کو ایک گلاس پانی میں بھِگو کر رکھ دیں اور صبح اس کا پانی نہار مُنہ پی لیں، شوگر متوازن رہے گی۔

اس عمل کو دو سے تین ماہ جاری رکھیں اور پھر جب شوگر لیول متوازن رہنے لگے تو اسے ہفتے میں صرف ایک مرتبہ استعمال کریں۔

بھنڈی کی دیگر خصوصیات

ایک کپ بھنڈی جسم میں روزانہ کی ضرورت کے مطابق فائبر فراہم کر سکتی ہے۔ بھنڈی میں موجود ڈائیٹری فائبر بھوک کا خاتمہ کرتے ہیں جسم میں فائبر وافر مقدار میں فراہم کرتے ہیں۔

یہ ذہنی دباؤ کو بھی کم کرتی ہے جسم کے مختلف حصوں میں پیدا ہونے والے دباؤ کا خاتمہ کرتی ہے۔ یہ کولیسٹرل کو بھی متوازن رکھتی ہے اور شوگر کے ساتھ ساتھ انسانی جسم میں کولیسڑول لیول متوازن رکھتی ہے۔

بھنڈی میں صرف ٪ا چربی ہوتی ہے یعنی یہ سب سے کم فیٹ والی غذا ہے جس کو وزن کم کرنے اور بھوک ختم کرنے کے لئے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ بھنڈی شوگر کو کنٹرول کرنے کے ساتھ ساتھ جسم کی تھکاوٹ کو دور کرنے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں