The news is by your side.

Advertisement

دلخراش واقعہ: بڑے بھائی کے ہاتھوں چھوٹا بھائی زیادتی کے بعد قتل

لاہور: خون سفید ہوگیا، بڑے بھائی کے ہاتھوں چھوٹا بھائی زیادتی کے بعد قتل ہوگیا، پولیس نے ملزم کو گرفتار کرلیا ہے۔

لاہور کی نشتر کالونی گذشتہ روز قتل ہونے والے آٹھ سالہ ارسلان کیس میں انویسٹی گیش پولیس کی کارروائی کرتے ہوئے ایک ملزم کو گرفتار کیا، گرفتار ملزم کوئی اور نہیں مقتول کا سگا بھائی تھا، جس نے زیادتی کے بعد ارسلان کو موت کے گھاٹ اتاردیا۔

پولیس کے مطابق ابتدائی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں بچےکےساتھ زیادتی ثابت ہوچکی ہے جبکہ مقتول بچے کے بڑےبھائی کی عمر سولہ سال ہے۔

پولیس کے مطابق قتل کرنیوالے ملزم فیضان نے چھوٹے بھائی کو زیادتی کے بعد قتل کا اعتراف بھی کر لیا ہے، بچے کی لاش پوسٹ مارٹم کے بعد ورثا کے حوالے کر دی گئی ہے اور پولیس کا کہنا ہے کہ مزید حقائق پنجاب فرانزک کی رپورٹ کے بعد سامنے آئیں گے۔

وزیراعلیٰ پنجاب نے نشتر کالونی کےعلاقےمیں آٹھ سالہ بچےکےقتل کا نوٹس لیتے ہوئے انسپکٹرجنرل پولیس سےرپورٹ طلب کی تھی، اپنے بیان میں عثمان بزدار نے کہا کہ مقتول بچےکےخاندان کو ہر قیمت پر انصاف فراہم کیاجائے۔

وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے مقتول بچےکے لواحقین سےدلی ہمدردی و اظہار تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے متاثرہ خاندان کو انصاف فراہم کرنےکی مکمل یقین دہانی بھی کرائی۔

گذشتہ روز نشتر کالونی سے چند روز قبل اغوا ہونے والے آٹھ سال کے ارسلان کی لاش روہی نالہ سے برآمد ہوئی تھی، بچے کی گمشدگی پر مقامی پولیس نے پہلے ٹال مٹول سے کام لیا اور مقدمہ نہیں درج کیا،بعدازاں ایس پی کی مداخلت پرمقدمہ درج کیا گیا، پولیس نے شبہ ظاہر کیا ہے کہ ارسلان کوقتل کیاگیاہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں