The news is by your side.

Advertisement

سیوریج کے نمونوں سے کرونا وائرس کا پتہ چلانے کا فیصلہ

لاہور: یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز اور واسا (واٹر اینڈ سینی ٹیشن ایجنسی) مل کر پولیو کی طرح کرونا وائرس کے نمونے سیوریج سے لیں گی، سیوریج ٹیسٹ کے ذریعے پتہ چلے گا کہ کس محلے میں کتنا وائرس پھیلا۔

تفصیلات کے مطابق لاہور کی یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز اور واسا کے درمیان پائلٹ پروجیکٹ شروع کرنے کا فیصلہ کیا گیا جس کے تحت پولیو کی طرح کرونا وائرس کے نمونے بھی سیوریج سے لیے جائیں گے۔

لاہور کے 30 علاقوں سے سیوریج کے نمونے لے کر آر ٹی پی سی آر ٹیسٹ کیا جائے گا، سیوریج ٹیسٹ کے ذریعے پتہ چلے گا کہ کس محلے میں کتنا وائرس پھیلا۔

یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز کے وائس چانسلر پروفیسر جاوید اکرم کا کہنا ہے کہ اسمارٹ سیمپلنگ کے ذریعے آبادی کے لحاظ سے کم ٹیسٹ کیے گئے، اسمارٹ لاک ڈاون میں لوگوں کو علاقے بند کرنے پر تحفظات ہیں۔

پروفیسر جاوید اکرم کا کہنا تھا کہ یونیورسٹی واسا سے مل کر سائنٹفک اسٹڈی کرنے جا رہی ہے، پنجاب حکومت کو بھی سائنٹفک اسٹڈی سے آگاہ کر دیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ ملک بھر میں کرونا کیسز کا گراف تیزی سے بلند ہوتا جا رہا ہے، گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک میں 6 ہزار 604 نئے کیسز سامنے آئے جس کے بعد ملک بھر میں وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 1 لاکھ 71 ہزار 666 ہوگئی۔

گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک میں کرونا وائرس سے مزید 153 اموات ہوئیں، مجموعی طور پر اموات کی تعداد 3 ہزار 382 ہوگئی ہے۔

گزشتہ چند دنوں میں 10 لاکھ آبادی میں کرونا سے اموات کی شرح 13 سے بڑھ کر 15 فیصد ہو چکی ہے، جبکہ 10 لاکھ آبادی میں کیسز کی تعداد بھی بڑھ کر 778 ہوگئی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں