The news is by your side.

Advertisement

جنسی زیادتی کے مقدمات کے شواہد اکٹھے کرنے کیلئے رہنما اصول وضع

لاہور : جنسی زیادتی کے مقدمات کے شواہد اکٹھے کرنے کیلئے رہنما اصول وضع کردیئے گئے، عدالتی فیصلے میں کہا گیا شواہداکٹھے کرنے کیلئے مخصوص کٹس استعمال کی جائیں۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ نے جنسی زیادتی کےمقدمات کے شواہد اکٹھے کرنے کیلئے رہنمااصول وضع کردیئے، جسٹس طارق سلیم شیخ نے جنسی زیادتی مقدمات پر11 صفحات کافیصلہ جاری کر دیا۔

فیصلے میں کہا گیا زیادتی کے مقدمات میں شواہداکٹھے کرنےکیلئےمخصوص کٹس استعمال کی جائیں، متاثرہ فرد کے متعلقہ کپڑے لازمی طور پر کٹس میں بند کئے جائیں اور میڈیکولیگل رپورٹ میں جنسی حملےسےمتعلق شواہد کی تفصیل درج کی جائے۔

لاہور ہائی کورٹ نے فیصلے میں کہا کہ میڈیکل کرنیوالے افسرلازمی دیکھیں حملہ کیسےہوا،وقوعہ کوکتناوقت گزرچکا، میڈیکل افسرسرٹیفکیٹ میں متاثرہ فرد کی جنس،عمر،ذہنی کیفیت لازمی درج کرے۔

فیصلے میں مزید کہا گیا متاثرہ فردوقوعہ پربتانےکےقابل نہ ہوتواسکی جسمانی کیفیت کےمطابق شواہداکٹھےکریں، جنسی حملےسےمتعلق تمام معلومات انتہائی احتیاط سے لی جائیں۔

تحریری فیصلے کے مطابق متاثرہ فرد کے کپڑوں،ٹشو پیپرزکو ڈی این اے تجزیہ کیلئےلازمی بھجوایا جائے، میڈیکل سائنس ،وکلامتفق ہیں ڈی این اے، فنگر پرنٹس اہمیت کے حامل ہیں۔

عدالتی فیصلے میں کہا گیا کہ ایس اوپیزکے تحت نمونے حاصل نہ کرنے والےافسران کیخلاف کارروائی نہ کرنامایوس کن ہے، وضع کردہ اصولوں پرعمل نہ کرنیوالےمیڈیکل افسروں کیخلاف کارروائی کی جائے۔

عدالت نے 10 سالہ بچےسےزیادتی کے ملزم ایازشمس کی درخواست ضمانت پرفیصلہ جاری کیا اور ملزم ایاز شمس کی ضمانت پر رہائی کی درخواست مسترد کر دی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں