The news is by your side.

عمران خان کو ایف آئی اے کی جانب سے بھجوائے گئے نوٹس معطل

لاہور : لاہور ہائی کورٹ نے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کو ایف آئی اے کی جانب سے بھجوائے گئے نوٹس معطل کردیے۔

تفصیلات کے مطابق لاہورہائیکورٹ میں ایف آئی اے کے نوٹسز کے خلاف عمران خان کی درخواست پر سماعت ہوئی۔

وکیل عمران خان نے کہا ایف آئی اےکواختیارنہیں وہ اس معاملےمیں انکوائری کرسکے، الیکشن کمیشن کےفیصلےمیں بھی ایف آئی اے کو انکوائری کی ہدایت نہیں کی گئی۔

وکیل کا کہنا تھا کہ ہرسیاسی جماعت قانون کےمطابق فنڈریزنگ کرسکتی ہے، پولیٹیکل پارٹیز پابند ہیں کہ فنڈنگ کے ذرائع ظاہر کریں۔

عدالت نے استفسار کیا کیا ایف آئی کا دائرہ اختیار ہے کہ وہ ایسی انکوائری کرسکے، جس پر وکیل عمران خان نے کہا ایف آئی اے کو اس کا اختیار نہیں۔

عدالت نے سوال کیا کیا وفاقی حکومت ایف آئی اے کو انکوائری کرنے کا کہہ سکتی ہے، جس پر وکیل نے بتایا کہ یہ انکوائری ایف آئی اے نے خودشروع کی، نوٹسزمیں یہ نہیں بتایا کہ وفاقی حکومت نے ہدایت کی ہے۔

عمران خان کے وکیل کا کہنا تھا کہ سیاسی جماعتوں کےخلاف الیکشن کمیشن اوروفاقی حکومت ہی کارروائی کرسکتی ہیں ، پی ٹی آئی ملک کی سب سےبڑی سیاسی جماعت ہے، ایف آئی اے ذاتی حیثیت میں عمران خان کو بلا رہا ہے۔

عدالت نے استفسار کیا کیاآپ ان اکاؤنٹس کواون کرتےہیں، جس پر وکیل عمران خان نے کہا کہ ہم نے 13 اکاؤنٹس کا کہا کہ ہمارے نہیں 8 ہمارےہیں، عدالت نے مزید استفسار کہا ان اکاؤنٹس میں ٹرانزکیشن کہاں ہیں؟

وکیل عمران خان نے بتایا کہ ان میں ٹرانزیکشن ہوئیں ہیں مگر ہمارا ان سے تعلق ہی نہیں، یہ نہیں کہا گیا کہ فنڈز غلط ہیں یا جرم سے حاصل کیے گئے۔

عدالت نے عمران خان کو ایف آئی اے کی جانب سے بھجوائے گئے نوٹس معطل کردیا اور ایف آئی اے سمیت فریقین سے جواب طلب کر لیا۔

عدالت نے اٹارنی جنرل کو معاونت کے لیے طلب کرتے ہوئے سماعت 7 دسمبرتک ملتوی کردی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں