The news is by your side.

Advertisement

بانی پاکستان کے معمولاتِ زندگی، عادات، پسند اور ناپسند

قائداعظم کھانے پینے کے معاملے میں بڑے محتاط تھے۔

وہ کم کھاتے تھے۔ شوربے کی بجائے خشک سالن زیادہ پسند کرتے۔ لنچ پر نان کا ایک ٹکرا لے لیتے۔ ناشتا بڑے شوق سے کرتے۔ ان کے ناشتے میں ابلا ہوا انڈہ، شہد اور جیم شامل ہوتا۔ ایک توس کھاتے تھے۔ آدھا توس انڈے اور آدھا شہد یا جیم کے ساتھ کھاتے۔ مہینے میں ایک دوبار سری پائے کھا لیتے۔ قائداعظم کو آم پسند تھے۔

بحیثیت راہ نما اور گورنر جنرل پاکستان قائدِ اعظم سے متعلق مختلف شخصیات نے مضامین لکھے اور کتب میں‌ ان کے تذکرے موجود ہیں جن کے مصنف بانیِ پاکستان کے رفقا،‌ سیاسی اور آزادی کی جدوجہد میں‌ شریک شخصیات اور وہ لوگ شامل ہیں‌ جو قیامِ پاکستان کے بعد حکومت میں‌ شامل رہے اور اس دوران انھیں‌ مسلمانوں‌ کے اس عظیم لیڈر کو قریب سے دیکھنے کا موقع ملا۔

سردار عبدالرّب نشتر جیسے قریبی ساتھیوں‌ کی بدولت قائدِ اعظم کے شب و روز، طبیعت اور مزاج سے عوام بھی واقف ہوئے۔ بانی پاکستان کی عادات اور پسند و ناپسند کے علاوہ یہ واقعہ بھی ہمیں مختلف مضامین اور کتب میں‌ پڑھنے کو ملتا ہے۔

15 اکتوبر 1937 کو آل انڈیا مسلم لیگ کا ایک اجلاس لکھنؤ میں ہوا جس میں مسلم لیگ کے لیڈروں نے شرکت کی۔ اس موقع پر نواب اسماعیل خان نے ٹوپی پہن رکھی تھی جو ان کو بہت خوب صورت لگ رہی تھی۔ قائدِ اعظم ٹوپی سے متاثر ہوئے۔

نواب اسماعیل نے قائدِ اعظم کو ٹوپی پہننے کی پیش کش کی۔ قائدِ اعظم نے ٹوپی پہنی تو رفقا نے بڑی تعریف کی۔ انھوں نے شیشے کے سامنے کھڑے ہو کر دیکھا تو ٹوپی ان کو پسند آئی۔ نواب اسماعیل کی درخواست پر قائداعظم ٹوپی پہن کر پہلی بار اجلاس میں شریک ہوئے۔

عوام نے قائداعظم کو ٹوپی پہنے دیکھ کر زبردست تالیاں بجائیں۔ یہ ٹوپی پورے ہندوستان میں ’’جناح کیپ‘‘ کے نام سے مشہور ہوگئی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں