The news is by your side.

Advertisement

لاک ڈاؤن میں ضروریات زندگی نے الیکٹریکل انجینئر کو ماہر شیف بنا دیا

کرونا وائرس کی وبا نے جہاں لوگوں کے روزگار داؤ پر لگا دیے وہیں لاک ڈاؤن میں ضروریات زندگی نے ایک الیکٹریکل انجینئر کو ماہر شیف بنا دیا۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق کرونا وبا کے دوران ایک الیکٹریکل انجینئر حذیفہ نے گھر کی ضروریات پوری کرنے کے لیے شیف بننے کا فیصلہ کیا، اور مہارت سے پیزا بنانے لگے۔

نازش ایاز نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ یہ نوجوان جس کا شعبہ الیکٹریکل انجینئرنگ ہے، اب اپنا پیزا بزنس پروان چڑھا رہے ہیں، کیوں لاک ڈاؤن نے انھیں اپنے شعبے سے باہر نکل کر شیف بننے پر مجبور کر دیا۔

ماہرانہ انداز میں پیزا بنانے والا یہ نوجوان حزیفہ احمد خان ہے، جو نجی یونی ورسٹی میں الیکٹریکل انجینئرنگ کا طالب علم ہے، لیکن وہ کہتے ہیں نہ کہ ٹیلینٹ کسی ڈگری کا محتاج نہیں ہوتا، ایسا ہی حذیفہ کے ساتھ ہوا۔

لاک ڈاؤن کے دوران جب ٹیوشنز ختم ہوئیں، اور یونی ورسٹی بھی بند ہوگئی تب حذیفہ نے اپنی صلاحیتیوں کو نہ صرف نکھارا بلکہ اس سے اپنا کاروبار بھی شروع کر دیا۔

حذیفہ کی والدہ کہتی ہیں کہ حالات کیسے بھی ہوئے لیکن وہ اپنے بیٹے کا حوصلہ بڑھانے کے لیے ہمیشہ ہی موجود رہیں۔

واضح رہے کہ کو وِڈ کی وبا کے دوران بہت سے لوگوں کے کاروبار متاثر ہوئے لیکن اس وبا کے دوران بہت سے لوگوں نے اپنی صلاحیتیوں کو بھرپور انداز میں نکھار کر کاروبار کے نئے مواقع بھی ڈھونڈ نکالے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں