The news is by your side.

Advertisement

ووٹنگ سے متعلق امریکی ریاست ٹیکساس کی عدالت کا بڑا فیصلہ

ٹیکساس: ووٹنگ سے متعلق امریکی ریاست ٹیکساس کی عدالت کا بڑا فیصلہ سامنے آیا ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق ٹیکساس کے فیڈرل جج نے ڈیموکریٹ پارٹی کی اپیل پر فیصلہ سنا دیا، جس میں کہا گیا ہے کہ انتخابات میں تمام رجسٹرڈ ووٹرز بذریعہ ڈاک ووٹ کاسٹ کر سکیں گے۔

عدالتی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ کرونا کی وبا کے خوف میں مبتلا ووٹرز کا پولنگ بوتھ آنا ضروری نہیں ہے۔

دوسری طرف ٹیکساس کے اٹارنی جنرل نے عدالتی فیصلے پر مایوسی کا اظہار کر دیا ہے، انھوں نے اپیل کا فیصلہ کرتے ہوئے کہا کہ بذریعہ ڈاک ووٹنگ سے فراڈ کے خدشات ہیں۔ ادھر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور ری پبلکن پارٹی بھی ڈاک کے ذریعے ووٹنگ کے سخت خلاف ہیں۔ خیال رہے کہ ٹیکساس کے پرائمری انتخابات جولائی میں شیڈول ہیں۔

امریکی ریاست اوریگان میں صدارتی پرائمری الیکشن 2020 کے نتائج آ گئے ہیں، جس کے مطابق ڈیموکریٹ پارٹی کے رکن اور سابق نائب امریکی صدر جو بائیڈن نے برنی سینڈرز کو شکست دے دی ہے۔ جوزف بائیڈن نے 3 لاکھ 13 ہزار 750 ووٹ حاصل کیے جب کہ برنی سینڈرز کو صرف 81 ہزار 254 ووٹ ملے، بائیڈن نے حریف کو 70.7 فی صد کے مارجن سے شکست دی۔

2020 کے امریکی صدارتی انتخابات میں ڈیموکریٹ پارٹی کے جو بائیڈن کو ریپبلکن کے ڈونلڈ ٹرمپ کا بڑا حریف قرار دیا جا رہا ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں