مبینہ موبائل چور دکانداروں اور پولیس تشدد سے ہلاک، بیٹے نے الزام مسترد کردیا -
The news is by your side.

Advertisement

مبینہ موبائل چور دکانداروں اور پولیس تشدد سے ہلاک، بیٹے نے الزام مسترد کردیا

کراچی : کینٹ اسٹیشن کے قریب مبینہ طور پر ایک موبائل چور دکانداروں اور پولیس کے تشدد سے ہلاک ہوگیا، متوفی کے بیٹے نے قانونی کارروائی کیلئے درخواست جمع کرادی۔

تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز کراچی کے علاقے کینٹ اسٹیشن کے قریب موبائل فون چوری کے الزام میں دکانداروں نے غلام سرور نامی شخص کو پکڑ کر تشدد کے بعد زخمی حالت میں پولیس کے حوالے کردیا۔

پولیس نے بھی تشدد کیا، مبینہ چور حراست میں دم توڑ گیا، دکانداروں کے مطابق غلام سرور چند دن پہلے موبائل چرا کر فرار ہوگیا تھا، گزشتہ روزغلام سرور مارکیٹ میں نظر آیا تو دکانداروں نے پکڑ کر اسے شدید تشدد کا نشانہ بنایا۔

اس حوالے سے پولیس کا کہنا ہے کہ مبینہ طور تھانے منتقلی کے دوران ملزم دم توڑ چکا تھا، پولیس کا مزید کہنا ہے کہ واقعے کے بعد غلام سرور کے اہل خانہ نے دکانداروں کو موبائل فون لاکر دے دیا تھا، پولیس نے صبح اطلاع ملنے پرغلام سرور اور دو دکانداروں کو حراست میں لیا۔

دوسری جانب مبینہ چور اور متوفی غلام سرور کے بیٹے نے اپنے والد پر طوری کے الزام کی سختی سے تردید کی ہے، احمد فراز کا کہنا ہے کہ میرے والد کو3بجے کینٹ اسٹیشن پر دکانداروں نے پکڑا، والد کا موبائل فون دوران چارجنگ تبدیل ہوگیا تھا۔

جب والد کو تھانے منتقل کیا گیا تو زندہ تھے، پولیس نے ہم سے50ہزار روپے رشوت مانگی۔ رات دس بجے معلوم ہوا کہ والد انتقال کرچکے ہیں۔

احمد فراز نے متعلقہ حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ ہمیں انصاف فراہم کیا جائے، متوفی غلام سرور کے بیٹے نے قانونی کارروائی کیلئے درخواست بھی جمع کرادی ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں