خواتین کے لیے مروجہ اصولوں کو للکارتی، ناچتی گاتی بے باک چانی -
The news is by your side.

Advertisement

خواتین کے لیے مروجہ اصولوں کو للکارتی، ناچتی گاتی بے باک چانی

بالی ووڈ کی میگا بجٹ فلم ’موہن جو دڑو‘ کا ایک اور گانا جاری کردیا گیا۔ اس سے قبل جاری کیے جانے والے 2 گانوں کے برعکس اس گانے کی شوٹنگ آؤٹ ڈور کی گئی ہے اور اس میں موہن جودڑو کے گلی کوچوں کو فلمایا گیا ہے۔

گانے سے ظاہر ہوتا ہے کہ فلم کے تخلیق کار دریائے سندھ کی قدیم تہذیب، موہن جودڑو کے زمانے اور اس کے ماحول کی بہترین عکاسی کرنے میں کامیاب رہے ہیں۔

8

گانا ’سرسریا‘ ریتھک روشن اور پوجا ہیج پر فلمایا گیا ہے جس میں وہ دونوں موہن جودڑو کی گلیوں اور بازاروں میں عالم سرخوشی میں گنگناتے گھوم رہے ہیں۔

گانے میں پس منظر میں چند ہی خواتین دکھائی دیں جس سے اندازہ ہو رہا ہے کہ اس زمانے میں خواتین کا باہر نکل کر گھومنا پھرنا زیادہ عام نہیں تھا اس کے باوجود فلم کی ہیروئن چانی بے باکانہ انداز میں ناچتی گاتی نظر آرہی ہے۔

اس بات کی تصدیق ریتھک روشن نے بھی اپنی سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ٹوئٹ کرتے ہوئے کی، ’چانی کو نہیں لگتا کہ اسے خواتین کے لیے مخصوص امتیازی اصولوں کی پاسداری کرنی چاہیئے‘۔

ساتھ ہی انہوں نے گانا ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا، ’دیکھیئے کس طرح وہ ان اصولوں سے آزاد ہے‘۔

گانے کا آغاز اجنبی زبان کے الفاظ سے ہوتا ہے جو موہن جودڑو سے ملنے والی لکھائی کے نمونوں کی طرح تاحال نامعلوم ہے۔

فلم میں استعمال کی جانے والی زبان کے بارے میں ڈائریکٹر اشوتوش گواریکر ایک بھارتی ویب سائٹ کو انٹرویو دیتے ہوئے بتا چکے ہیں کہ انہوں نے ہندی اور سندھی زبان کو ملا کر مکالمے لکھوائے ہیں۔ ’دونوں زبانوں کے ملاپ سے بننے والے مکالمے فلم بینوں کے لیے سمجھنا مشکل نہیں ہوں گے‘۔

1

فلم کے اسکرپٹ کے مطابق چانی مہا پجاری کی بیٹی ہے اور اس سے قبل جاری کیے جانے والے گانوں اور ٹریلر میں اسے اپنے سر پر مخصوص تاج یا زیورات اور ایک خاص طبقے کے لیے مخصوص لباس میں ہی دیکھا گیا۔

تاہم اس گانے میں وہ ایک عام سی لڑکی کی طرح سادہ سا لباس پہنے ہوئے ہے جبکہ اس کے سر پر بھی کوئی امتیازی زیور نہیں۔

5

موہن جودڑو کے لوگوں کا ذریعہ معاش تجارت تھا۔ گانے میں شہر کے بیچوں بیچ واقع ایک بازار دکھایا گیا ہے جہاں قدیم طرز پر تعمیر شدہ مختلف دکانوں پر غذائی اجناس، جانوروں کا چارہ، ہاتھی دھات اور دیگر دھاتوں سے بنے مجسمے اور دیگر آرائشی اشیا موجود ہیں۔

6

ایک موقع پر موسیقی کے آلات فروخت کرنے والی ایک دکان بھی دکھائی گئی۔

4

گانے میں موہن جودڑو کی پہچان اس کی خاص گلیاں بھی دکھائی گئی ہیں جو پکی اینٹوں سے تعمیر کی گئی ہیں۔

7

گانے میں رنگ ریز اور مٹی سے بنائے جانے والے برتن بھی دکھائے گئے ہیں۔

2

اس گانے کے بول جاوید اختر نے لکھے ہیں جبکہ موسیقی اے آر رحمٰن نے دے دی ہے۔ گانے کو سشوت سنگھ اور ساشا تریپتی نے گایا ہے۔

مجموعی طور پر یہ گانا ایک اچھی کوشش ہے تاہم ٹریلر کی طرح اسے بھی تعریف اور تنقید دونوں کا سامنا ہے۔

اس سے قبل فلم کے 2 گانے ’تو ہے‘ اور ٹائٹل سانگ ’موہن جودڑو‘ جاری کیا جاچکا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں