The news is by your side.

Advertisement

سندھ میں کرونا ویکسین کی 76 ہزار سے زائد خوارکیں ضائع، آسٹرازینیکا اور فائزر بھی شامل

کراچی: صوبہ سندھ میں 76 ہزار سے زائد کرونا ویکسین کی خوراکیں ضائع ہوئیں، جن میں سب سے زیادہ آسٹرزینیکا کی خوراکیں شامل ہیں۔

اے آر وائی نیوز کو صوبائی محکمہ صحت کے ذرائع سے ملنے والی اطلاع کے مطابق صوبے میں 76 ہزار 935 انسداد کورونا کی ویکسین خوراکیں ضائع ہو گئیں۔

ذرائع نے بتایا کہ یہ خوراکیں صوبے بھر میں قائم مختلف سینٹرز پر رکھی گئیں تھیں، جو حکام اور عملے کی غفلت کیوجہ سے ضائع ہوگئیں۔

محکمہ صحت کے ذرائع نے انکشاف کیا کہ سب سے زیادہ آسٹرازینیکا کی 23 ہزار 96 خوراکیں ضائع ہوئیں، دوسرے نمبر پر سائنو ویک کی 22 ہزار 675 خوراکیں ضائع ہوئیں۔

مزید پڑھیں: پاکستان میں کتنے کروڑ لوگوں نے ویکسین لگوائی؟ تفصیلات سامنے آگئیں

یہ بھی پڑھیں: ‘پاکستان کی تقریباً آدھی آبادی کو کورونا ویکسین کی ایک خوراک لگا دی گئی’

ذرائع نے بتایا کہ سائنو فارم کی 17 ہزار 675، پاک ویک کی 7 ہزار 876 خوراکیں ضائع ہوئیں، کین سائنو ویکسین کی 2 ہزار 675 ، موڈرنا ویکسین کہ 1 ہزار 675 ، فائزر ویکسین کی 1 ہزار 178  اور سب سے کم روسی ویکسین اسپوٹنک کی 85 خوراکیں ضائع ہوئیں۔

ذرائع نے بتایا کہ ویکسین ضائع ہونے کی کئی وجوہات ہیں، جن میں سب سے اہم مخصوص درجہ حرارت کا نہ ہونا، انجیکشن میں بھرتے وقت زمین پر گر جانا، ویکسین لگاتے ہوئے متعلقہ شخص کی طبیعت خراب ہونا سمیت دیگر عوامل شامل ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں