The news is by your side.

Advertisement

الطاف حسین کی تقاریر پر براہِ راست نشر کرنے پر تاحکم ثانی پابندی عائد

لاہور: ہائی کورٹ کے فل بنچ نے ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین کی تقاریر کو براہ راست نشر کرنے پر تاحکم ثانی پابندی عائد کر دی۔

تفصیلات کے مطابق جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے الطاف حسین سمیت ایم کیو ایم کے دیگر رہنماؤں کے خلاف غداری کا مقدمہ درج کرنے کی درخواستوں کی سماعت کی۔

درخواست گزاروں نے مؤقف اختیار کیا کہ الطاف حسین نے پاک فوج اور سیکیورٹی اداروں کے خلاف بے بنیاد پروپیگنڈہ شروع کر رکھا ہے اور آئے روز مختلف الزامات عائد کرتے ہیں، جس سے پاکستان اور پاک فوج کی بدنامی ہو رہی ہے۔

الطاف حسین کا یہ اقدام بغاوت کے زمرے میں آتا ہے، لہذا ان کے خلاف غداری کا مقدمہ درج کیا جائے۔

عدالت نے سماعت کے بعد وفاقی حکومت اور وزارت قانون سے سات ستمبر کو جواب طلب کرتے ہوئے وزارتِ داخلہ کو ہدایت کی کہ وہ الطاف حسین کی شہریت کے متعلق تفصیلی ریکارڈ پیش کرے۔

عدالت نے الطاف حسین کی تقاریر کو براہ راست نشر کرنے پر بھی تاحکم ثانی پابندی عائد کر دی جبکہ اٹارنی جنرل اور ایڈووکیٹ جنرل پنجاب کو معاونت کے لیے طلب کر لیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں