The news is by your side.

Advertisement

ایم کیو ایم استعفے: وزیراعظم نے آج اہم اجلاس طلب کرلیا

اسلام آباد: ایم کیو ایم کے اراکین نے قومی اسمبلی، سینیٹ اور سندھ اسمبلی میں استعفیٰ جمع کرادیئے۔

ایم کیو ایم نے کراچی میں جاری رینجرز آپریشن میں مبینہ طور پر متحدہ کو نشانہ بنائے جانے پر احتجاجاََ سندھ اور قومی اسمبلی کے ساتھ ساتھ سینیٹ سے بھی مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا۔

تفصیلات کے مطابق یہ فیصلہ ایم کیو ایم رابطہ کمیٹی لندن اور کراچی کے مشترکہ اجلاس میں کیا گیا، ایم کیوایم رابطہ کمیٹی کراچی اور لندن کے مشترکہ اجلاس میں قومی اسمبلی کی نشستوں سے مستعفی ہونے کا فیصلہ کرلیا گیا ہے، الطاف حسین نے رابطہ کمیٹی کے فیصلے کی توثیق کردی، ایم کیو ایم کے اراکین آج قومی اسمبلی اجلاس میں استعفے پیش کریں گے۔

ذرائع کے مطابق قومی اسمبلی کے بعد سینیٹ اور صوبائی اسمبلی سے بھی ایم کیو ایم اراکین کے مستعفی ہونے کا امکان ہے، ایم کیو ایم کا کہنا ہے کہ اپنے تحفظات سے کئی بار وزیر اعظم اور وزیر داخلہ کو بھی آگاہ کیا ہے مگر اس سلسلے میں ایم کیو ایم کی بات نہیں سنی جارہی، لاپتہ افراد کی فہرست قومی اسمبلی میں پیش کی لیکن اس پر کوئی ایکشن نہیں لیا گیا۔

واضح رہے کہ سندھ اسمبلی میں ایم کیو ایم کے کل ارکان کی تعداد 51 ہے، سینیٹ میں ایم کیو ایم کے آٹھ ارکان موجود ہیں جبکہ قومی اسمبلی میں متحدہ کے اراکین کی تعداد 24 ہے، جن میں چار خواتین اور ایک اقلیتی رکن شامل ہے۔

 


ایم کیو ایم کے استعفیٰ دینے کی وجوہات


 

 
ایم کیو ایم نےاسمبلی سےمستعفی ہونے کی وجوہات سے متعلق مراسلہ جاری کردیا۔ جس میں کراچی آپریشن پر شدید تحفظات کا اظہار کیا گیا۔

ایم کیوایم کا یہ مراسلہ پندرہ نکات پر مشتمل ہے جس میں مؤقف اختیار کیا گیاہے کہ حکومت سندھ کا ہدف ایم کیو ایم ہے، کارکنان، ہمدردوں کے دفاتر اور گھروں پر بلاجواز چھاپے مارے جا رہے ہیں، گرفتار ہونے والے کارکنوں پر تشدد کیا جارہا ہے ۔ ایم کیوایم کی سیاسی،سماجی اور رفاہی سرگرمیوں پر بھی غیر آئینی اور غیراعلانیہ پابندی لگادی گئی ہے۔

مراسلے میں کہا گیا ہے کہ کراچی آپریشن کے دوران ایم کیوایم کے چالیس کارکنان کو ماروائے عدالت قتل کیا گیا، ڈیڑھ سو کارکن اور ہمدرد لاپتہ ہیں ، متحدہ کی جانب سے یہ الزام بھی عائد کیا گیا ہے کہ تحریک انصاف کو قا نون نافذ کرنے والے اداروں کی حمایت حاصل ہے۔

مراسلے کے مطابق ماضی میں بہت سے رہنماوں نے فوج کیخلا ف بیانات دیئے مگر صرف الطاف حُسین کیخلاف پابندی لگانا غیر آئینی ہے۔

 

 

 


 ایم کیو ایم اراکین کے قومی اسمبلی میں استعفیٰ جمع، 23ارکان کے استعفوں کی تصدیق


 ایم کیو ایم نے سندھ اسمبلی میں اپنے اراکین کے استعفے جمع کروانے کے بعد قومی اسمبلی میں بھی اپنے استعفے پیش کر دیئے ہیں، اراکین استعفے دینے کے لیے قومی اسمبلی کے سپیکر ایاز صادق کے چیمبر میں گئے اور اسپیکر قومی اسمبلی نے ان استعفوں کی تصدیق کی۔

 اسپیکرایازصادق نے ایم کیوایم کے تیئس ارکان کے استعفے تصدیق کے بعد الیکشن کمیشن کو بھجوادیئے۔

 ذرائع کے مطابق اسپیکر قومی سر دار ایاز صادق کو پہلا استعفیٰ ایم کیو ایم کے رہنما ڈاکٹر فاروق ستار نے  پیش کیا، اسپیکر ایاز صادق نے پوچھا کہ آپ کسی دباؤ میں آ کر تو استعفے نہیں دے رہے جس پر فاروق ستار نے اس بات کی تردید کر دی۔

 


رینجرز کا رویہ جانبدار ہے، پی ٹی آئی کیلئے راستہ بنایا جارہاہے، فاروق ستار 


ایم کیو ایم کے پارلیمانی لیڈر فاروق ستار ایم کیو ایم کا 19 نکاتی مراسلہ پیش کر رہے ہیں۔

ایم کیو ایم کے رہنماء فاروق ستار نے قومی اسمبلی میں اظہارِ خیال کرتے ہوئے کہا کہ ایم کیو ایم کو انتقامی کارروائیوں کا نشانہ بنایا جارہا ہے، ایم کیو ایم کے خلاف سازشیں کی جا رہی ہے ، ہر دہشت گردی کے پیچھے ایم کیو ایم کا نام لگایا جارہا ہے ۔

ان کا کہنا تھا کہ رینجرز کی کارروائیاں جانبدارانہ ہیں، تحریک انصاف کو سپورٹ اور ان کیلئے راستہ بنایا جارہا ہے، بلدیاتی انتخابات کا راستہ کسی اور کے لیے کھولا جارہا ہے۔

فاروق ستار نے کہا کہ ہم سمھجتے تھے کہ کراچی آپریشن شفاف انداز میں ہوگا، ایم کیو ایم کا میڈیا ٹرائل کیا جا رہا ہے، ایم کیو ایم کے کارکنوں کو غیر قانونی گرفتاری کے بعد تشدد نشانہ بنایا جارہا ہے، ہمارے کسی کارکن کو عدالت میں پیش نہیں کیا گیا ، ہمارے ہزاروں شہداء کے قاتل کہاں ہے؟ جن بے گناہ کو رہا کیا گیا ان میں سے کوئی ایک ایسا نہیں جس پر تشدد نہ کیا گیا  ہو۔

انھوں نے کہا کہ ایم کیو ٰایم کے حامیوں کے گھروں پر چھاپے مارے جارہے ہیں،  ہمارے زخموں پر مرہم رکھنے کے بجائے نمک پاشی کی جارہی ہے، ایم کیو ایم کے مرکز اور ہمشیرہ کے گھر چھاپہ مارا، ہم نے انصاف کیلئے ہر دروازہ کھٹکھٹایا۔

فاروق ستار نے کہا کہ اسپیکر صاحب مہاجروں کو دیوار سے لگایا جا رہا ہے، مہاجروں کو اپنا حق لینے سے روکا جا رہا ہے، چوہدری نثار نے ہماری پیش کی جانے والی فہرست کو جعلی کہا ، چوہدری نثار نے کہا کہ ماورائے عدالت قتل میری ڈکشنری مین نہیں، الطاف حسین اور ہزاروں کارکنوں کے خلاف جھوٹے مقدمات درج کئے گئے۔

 دعوی کیا جا رہا ہے کہ کراچی مین امن قائم ہوا، خدا  کرے ایسا ہی ہو۔ 


 ایم کیو ایم اراکین نے استعفیٰ اسپیکر سندھ اسمبلی کو جمع کرادیئے


 ایم کیو ایم اراکین نے استعفیٰ اسپیکر سندھ اسمبلی کو جمع کرادیئے ہیں، ایم کیو ایم کے رہنماء خواجہ اظہار الحسن نے تمام اراکین کے استعفیٰ جمع کرائے،سندھ اسمبلی میں ایم کیو ایم کے 51 اراکین ہیں۔

 ایم کیو ایم کی پارلیمانی پارٹی نے استعفوں کی توثیق کردی ہے، ایم کیو ایم کے رہنما خواجہ اظہار الحسن استعفیٰ لے کر سندھ اسمبلی پہنچ گئے، اس سے قبل ایم کیوایم کا پارلیمانی اجلاس سندھ اسمبلی میں جاری تھا، خواجہ اظہار کا کہنا ہے کہ مشاورت کے بعد استعفے جمع کرائیں گے۔

 اسپیکر آغا سراج درانی نے کہا کہ ایم کیوایم کے بغیر ایوان سونا سونا لگے گا، انھوں نے کہا کہ استعفے منظور ہونے میں وقت لگے گا، مشورہ ہے کہ استعفیٰ واپس لے لیں۔ ایم کیو ایم کے 41 اراکین نے استعفیٰ جمع کرائے جبکہ 10 اراکین نے فون پر تصدیق کی۔

 

ایم کیو ایم اراکین قاروق ستار کی قیادت میں قومی اسمبلی پہنچ گئے، فاروق ستار کا کہنا ہے کہ تینوں ایوانوں سے آج ہی مستعفی ہوں گے۔

وزیرِ اعظم نے ایاز صادق کو استعفیٰ قبول نہ کرنے کی ہدایت کردی۔


ایم کیو ایم اراکین نے سینیٹ میں بھی استعفیٰ جمع کرادیئے


ایم کیو ایم اراکین نے سینیٹ سے بھی مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا۔

ایم کیو ایم کے آٹھ سینیٹرز نے سینیٹ سیکرٹریٹ میں استعفے جمع کرادیئے، سینیٹ میں ایم کیو ایم کے 8 سینیٹرز ہیں، جن میں کرنل ریٹائرڈ سید طاہر حسین مشہدی، خوش بخت شجاعت، مولانا تنویر الحق تھانوی، میاں محمد عتیق شیخ، ڈاکٹر محمد فروغ نسیم، محمد علی خان سیف، نسرین جلیل اور نگہت مرزا شامل ہیں۔

ایم کیو ایم کے اراکین کے استعفی سینیٹر طاہر مشہدی اور نسرین جلیل کی جانب سے سیکریٹری سینیٹ کو جمع کروائے گئے۔


اگر دباؤ کے بغیر استعفے دیے تو قبول کروں گا، ایازصادق


 قومی اسمبلی کے اسپیکر سردار ایازصادق نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ اگر ایم کیو ایم اراکین نے رضاکارانہ طور پر استعفے دیئے تو وہ قبول کرلیں گے۔

ایاز صادق کا کہنا تھا کہ اگر انھوں نے اپنے استعفے میرے پاس جمع کرائے تو میں ان سے تصدیق کروں گا اور پھر قبول کروں گا۔


اب تک استعفے کیوں جمع نہیں کرائے گئے، الطاف حسین برہم


الطاف حسین نے ایم کیوایم کے اراکین قومی اور صوبائی اسمبلی پر برہمی کا اظہار کیا، الطاف حیسن نے پارٹی رہنماؤں سے پوچھا کہ فیصلے کے بعد اب تک استعفے کیوں جمع نہیں کرائے گئے؟

یاد رہے کہ کراچی آپریشن اور ایوان میں بات نہ سنی جانے پر ایم کیوایم کو شدید تحفظات ہیں۔


ایم کیو ایم کے استعفوں پر ایاز صادق اور چوہدری نثار کی مشاورت


 اسپیکرقومی اسمبلی ایاز صادق اورچوہدری نثار نے ایم کیوایم کے ارکان اسمبلی کے استعفوں سے متعلق مشاورت کی ۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ دونوں رہنماؤں نے تازہ ترین سیاسی صورتحال پر حکومتی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا اور ایم کیو ایم کے استعفی عجلت میں قبول نہ کئے جانے کا فیصلہ کیا۔ ملاقات میں اسپیکر ایاز صادق نے وزیرِ داخلہ کو ایم کیو ایم کے تحفظات دور کرنے کی بھی ہدایت کی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرے دورے سے واپسی تک استعفوں کا معاملہ آگے نہ بڑھا یاجائے، وزیر اعظم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ذرائع کے مطابق ایم کیو ایم کے استعفوں کے معاملے پر وزیر اعظم ہاؤس میں جاری اجلاس میں  قانونی ماہرین سے مشاورت کی جا رہی ہے۔ حکومت کی کوشش ہے کہ ایم کیو ایم کے اراکین اسمبلی کے استعفے منظور نہ کئے جائیں۔

جبکہ وزیراعظم نواز شریف کی خواہش ہے کہ ایم کیو ایم کے اراکین اسمبلی چھوڑ کر نہ جائیں۔ وزیر اعظم نے اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق کو ہدایت جاری کی ہے کہ بیلاروس کے دورے سے واپسی تک ایم کیو ایم کے استعفوں کا معاملہ آگے نہ بڑھا یاجائے۔

  ذرائع کے مطابق حکومت کی جانب سے کوشش کی جائے گی کہ ایم کیو ایم کے تحفظات دور کئے جائیں تاہم کراچی آپریشن کے حوالے سے کوئی کمپرومائز نہیں کیا جائے گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

  وزیراعظم نے آج اہم اجلاس طلب کرلیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وزیر اعظم نواز شریف نے ایم کیو ایم اراکین کے استعفوں پر اجلاس طلب کرلیا ۔حکومتی عہدیداروں نے وزیر اعظم کو کرادار ادا کرنے کا مشورہ دے دیا۔

وزیر اعظم نواز شریف بیلا روس کے دورے سے وطن واپس پہنچے تو ایک نئے سیاسی بحران نے اُن کا استقبال کیا، وزیر اعظم نواز شریف نے سب سے پہلے وزیر داخلہ کو مشاورت کیلئے بلایا۔

ملاقات میں ایم کیو ایم کے استعفوں کے بعد پیدا ہونیوالی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا، اسحاق ڈار کا کہنا ہے استعفوں کی منظوری کا مرحلہ ابھی مکمل نہیں ہوا۔

ذرائع کےمطابق حکومتی حلقوں میں ایم کیو ایم کےاستعفوں سےمتعلق بےچینی پائی جاتی ہے۔ حکومتی عہدیداروں نے وزیر اعظم کو مشورہ دیا کہ وہ معاملے میں مداخلت کریں اور ایم کیو ایم اراکین کے استعفے منظور نہ کئے جائیں جس کے بعد وزیر اعظم نواز شریف نے آج اہم اجلاس طلب کرلیا جس میں وہ اپنے رُفقا سے صورتحال پر مشاورت کریں گے۔

ایم کیو ایم کے استعفوں کی منظوری کا نوٹیفکیشن تو تیار ہوگیا لیکن کھیل ابھی باقی ہے۔ مولانا فضل الرحمٰن کو معاملہ سلجھانے کا ٹاسک دے دیا گیا ہے۔ حکومتی اتحادی سیاسی بحران کو ٹالنے کیلئے سرگرم ہوگئے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آصف زرداری کی ایم کیو ایم اراکین کے استعفے منظور نہ کرنے کی ہدایت

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پیپلزپارٹی نے ایم کیوایم کے استفعوں پر مشاورت کے بعد کوئی بھی قدم اٹھانے کا فیصلہ کیاہے، جس کیلئے وزیر اعلیٰ سندھ نے پارٹی قیادت سے رابطہ کرلیا ہے کہ ایم کیو ایم اراکین کے استعفوں پرکیا کرنا ہے؟

ذرائع کے مطابق پیپلزپارٹی کی قیادت نے وزیراعلیٰ قائم علی شاہ کو استعفے منظور نہ کرنے کی ہدایت کی ہے۔

سیاسی صورتحال پر مشاورت کے لئے پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زردراری نے پی پی سندھ کے رہنماؤں کی بیٹھک لگانے کا بھی فیصلہ کیا ہے ۔

پارٹی رہنماؤں کا مشاورتی اجلاس اگلے ہفتے لندن یا دبئی میں متوقع ہے۔ اجلاس سے قبل سندھ اسمبلی میں ایم کیو ایم اراکین کے استعفوں پر فی الحال کسی ردعمل سے گریز کا فیصلہ کیا گیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں