MQM-Lایم کیوایم لندن کا یادگار شہدا جانے کا اعلان، عزیزآباد کے راستے سیل
The news is by your side.

Advertisement

ایم کیوایم لندن کا یادگار شہدا جانے کا اعلان، عزیزآباد کے راستے سیل

کراچی : ایم کیو ایم لندن کے یادگار شہدا جانے کے اعلان کے بعد نائن زیرو ، جناح گراؤنڈ، عائشہ منزل، لیاقت علی خان چوک اور اطراف کے راستے بند کردیے گئے جبکہ پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری نے علاقے کو گھیر لیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ایم کیو ایم لندن نے یادگار شہدا پر حاضری کے پروگرام کے پیش نظر عزیزآباد کے کئی راستے سیل کردیئے گئے، رینجرز اور پولیس، وومن پولیس اور دیگر اداروں کے اہلکارکی بھاری نفری تعینات کردی گئی ہے۔

پولیس نےعائشہ منزل سے لیاقت علی خان چوک جانے والے راستوں کو بند کردیا جبکہ جناح گراؤنڈ اور نائن زیرو جانے والی سڑک پر گاڑیاں کھڑی کرکے سڑک بلاک کردی گئی ہیں۔

رکاوٹوں سے علاقہ مکینوں کو مشکلات کا سامنا ہے، عزیز آباد اور اطراف کی تمام مارکیٹیں بند ہیں، ٹرانسپورٹ نہ ہونے کے باعث خواتین کا بھی پیدل مارچ ممکنہ کشیدگی سے نپٹنے کیلئے رینجرز کے جوانوں نےبھی ڈٰیوٹیاں سنبھال لیں۔

علاقے میں بکتربند گاڑیاں اورواٹرکینن بھی موجود ہے۔

ذرائع کے مطابق انتظامیہ نے فیصلہ کیا ہے کہ ایم کیوایم لندن کے کارکنوں کو یادگار شہداء کی جانب مارچ نہیں کرنے دیا جائے گا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ہدایت ہے کسی کو بھی لیاقت علی خان چوک نہ دینے جایا جائے، جوہر آباد کے سب انسپکٹر نےعلاقے میں اپنے گھروں کو جانے سے روک دیا، علاقہ مکین متبادل راستوں سے اپنے گھروں کو جائیں۔

یاد رہے کہ ایم کیوایم لندن رہنماؤں نے آج پارٹی کی یادگارشہدا پر حاضری کا اعلان کیا ہے۔


مزید پڑھیں : شہدائے یادگار پر ایم کیو ایم پاکستان اور ایم کیو ایم لندن کے کارکنان آمنے سامنے 


واضح رہے کہ گذشتہ سال اکتوبر میں متحدہ قومی موومنٹ لندن کے رہنماؤں اور کارکنوں نے نائن زیرو کے قریب یادگارہ شہدا پر حاضری دینے کی کوشش کی تاہم رینجرز نے انہیں روک دیا اور صرف بزرگوں اور خواتین کو جانے کی اجازت دی تھی۔

نومبر 2016 میں  عزیزآباد میں واقع شہدائے یادگار پر ایم کیو ایم پاکستان اور ایم کیو ایم لندن کے کارکنان آمنے سامنے آ گئے تھے اور صورتحال کشیدہ ہوگئی تھی، ایم کیو ایم لندن کے کارکنان نے قائد ایم کیو ایم کے حق میں شدید نعرے بازی کی تھی۔

خیال رہےمیئر کراچی وسیم اختر کو آخری مقدمے میں ضمانت ملنے کے بعد سینٹرل جیل سے رہا کردیا گیا تھا جس کے بعد وہ ایک ریلی کی صورت مزارِ قائد پہنچے اور فاتحہ خوانی کی بعد ازاں وہ عزیز آباد میں واقع ایم کیو ایم کے شہدائے یاد گار حاضری دینے پہنچنا تھا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں