لاپتہ کارکنان کے حوالے سے پولیس رپورٹ جھوٹ کا پلندہ ہے، ایم کیو ایم لندن mqm-london
The news is by your side.

Advertisement

لاپتہ کارکنان پر پولیس رپورٹ جھوٹ کا پلندہ ہے، متحدہ لندن

لندن: متحدہ قومی موومنٹ (لندن) رابطہ کمیٹی نے کہا ہے کہ ایم کیو ایم کے لاپتہ کارکنوں کے بارے میں پولیس کی جانب سے جمع کرائی گئی رپورٹ سراسر جھوٹ اور حقائق کے منافی ہے۔

ایم کیو ایم لندن سیکریٹیریٹ سے جاری کردہ اپنے بیان میں رابطہ کمیٹی کے ارکان کا کہنا تھا کہ محمد ارشاد کو رینجرز نے 12 اکتوبر 2013 کو سندھ حکومت کے محمکہ صحت میں ان کے دفتر سے گرفتار کیا گیا تھا جب کہ دوسرے کارکن امیر احمد نظامی کو 7 فروری 2014 کو رینجرز نے ان کے گھر سے گرفتار کیا تھا جس کے گواہ علاقہ مکین بھی ہیں۔

اسی سے متعلق : ایم کیو ایم کے لاپتہ کارکن بھارت فرار ہوگئے ہیں: پولیس کا دعویٰ

رابطہ کمیٹی نے مذید کہا کہ کارکنان یا تو ماورائے عدالت قتل کردیے گئے ہیں یا اب بھی قانون نافذ کرنے والے اداروں کے کسی ٹارچر سیل میں موجود ہیں جب کہ چند روز قبل بھی لاپتہ افراد کے مقدمے میں یہ بات ہائیکورٹ کے سامنے لائی گئی ہے کہ لاپتہ افراد کی بہت بڑی تعداد کو نامعلوم لاشوں کے طو پردفنایا گیا ہے۔

انہوں نے الزام عائد کیا کہ پولیس اور قانون نافذ کرنے والے ادارے لاپتہ افراد کو قتل کر کے پھینک رہے ہیں یا پھر ایم کیو ایم کے لاپتہ کارکنوں کو تشدد کا نشانہ بنا کر پی ایس پی میں شامل ہونے پر مجبور کیا جارہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : کراچی میں 85 ہزار نامعلوم لاشوں کا انکشاف

رابطہ کمیٹی نے اپیل کی کہ آرمی چیف کراچی میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کی غیر قانونی کارروائیوں کا فوری نوٹس لیں جب کہ معزز عدلیہ گمراہ کن رپورٹس پیش کرنے پر پولیس افسران کے خلاف کارروائی کریں اور انسانی حقوق کی تنظیمیں کراچی میں ایسے واقعات کی تحقیقات کریں۔

واضح رہے کہ سندھ ہائیکورٹ میں لاپتہ افراد سے متعلق سماعت کے دوران کراچی پولیس کا کہنا ہے کہ ایم کیو ایم کے بیشتر کارکن لاپتہ نہیں ہوئے، بلکہ گرفتاری کے ڈر سے بھارت سمیت دیگر ملکوں کی طرف فرار ہوگئے۔ عدالت نے پولیس کے دعوے پر ایئرپورٹ اور امیگریشن کا ریکارڈ طلب کرلیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں