all-parties-conference ایم کیوایم پاکستان، لندن، پی ایس پی اورحقیقی ایک ہی ہیں، سیاسی رہنما
The news is by your side.

Advertisement

ایم کیوایم پاکستان، لندن، پی ایس پی اورحقیقی ایک ہی ہیں، سیاسی رہنما

کراچی : ایم کیو ایم پاکستان کی جانب سے آل پارٹیز کانفرنس کے انعقاد پر مختلف سیاسی جماعتوں نے ملے جلے رد عمل کا اظہار کیا ہے، پیپلز پارٹی اور اے این پی رہنماؤں کا کہنا ہے کہ بہتریہ ہی ہوگا یہ جماعتیں ایک ہوجائیں اورمل کرکام کریں۔

تفصیلات کے مطابق ایم کیو ایم پاکستان کے زیر اہتمام اے پی سی کے انعقاد پر پیپلز پارٹی کی رہنما شرمیلا فاروقی کا کہنا ہے کہ ایم کیوایم پاکستان، لندن، پی ایس پی اورحقیقی ایک ہی ہیں، کراچی کی ترقی کیلئے بہتر یہ ہی ہوگا کہ یہ جماعتیں ایک ہوجائیں اور مل کرکام کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ الیکشن کے قریب ایم کیوایم کے یہ تمام دھڑے ایک ہوسکتے ہیں اور یہ بھی ہو سکتا ہےیہ دھڑے آپس میں ضم ہوکرایک ہی جماعت قائم کرلیں۔

عوامی نیشنل پارٹی (اے این پی) کے رہنما شاہی سید نے اس حوالے سے کہا کہ اے پی سی کراچی سمیت پورے پاکستان کیلئے اچھی بات ہے، ہم چاہتے ہیں کہ کراچی میں مکمل طور پرامن قائم ہو، ان کا کہنا تھا کہ بلدیاتی نمائندوں کو اختیارات ایجنڈے میں شامل ہیں۔

علاوہ ازیں سندھ کے وزیر منظور وسان کا کہنا ہے چار ماہ قبل میں نے جو بیان دیا تھا وہ سچ ثابت ہوگیا، پہلے ہی کہا تھا کہ ایم کیو ایم لندن ،ایم کیو ایم پاکستان اور پی ایس پی سب ایک ہی ہیں ان کا مزید کہنا تھا کہ الیکشن جیسے جیسے قریب آئے گا یہ سب دھڑے ایک ہوجائیں گے۔

پی ٹی آئی کراچی کے رہنما عمران اسماعیل نے کہا کہ ایم کیوایم پاکستان کے وفد سے گزشتہ روز ملاقات ہوئی تھی، ایم کیوایم پاکستان کے وفد نے اے پی سی میں شرکت کیلئے مدعو کیا ہے، وفد نے یقین دلایا ہے کہ کانفرنس کا مقصد بانی ایم کیوایم کو جواب ہے۔


مزید پڑھیں: پی ایس پی کا ایم کیو ایم کی اے پی سی میں شرکت کا اعلان


واضح رہے کہ کراچی کے مسائل کے حل کیلئے ایم کیو ایم نے کل بروز منگل آل پارٹیز کانفرنس کے انعقاد کا اعلان کیاہے، اس سلسلے میں ایم کیو ایم رہنماؤں نے پی ایس پی، مہاجر قومی موومنٹ حقیقی، پی ٹی آئی، اے این پی اور پیپلز پارٹی رہنماؤں سے ملاقات کی۔

سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں نے مثبت رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے اے پی سی میں شرکت کی ہامی بھری ہے جبکہ پی پی رہنما نثار کھوڑو کا کہنا تھا کہ پارٹی کی مشاورت کے بعد شرکت کا فیصلہ کریں گے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں