The news is by your side.

Advertisement

امریکا میں ہیپاٹائٹس کے پراسرار پھیلاؤ نے خطرے کی گھنٹی بجا دی، بچے ہلاک

واشنگٹن: امریکا میں ہیپاٹائٹس کے پراسرار پھیلاؤ نے خطرے کی گھنٹی بجا دی، 5 بچے ہلاک ہو گئے۔

تفصیلات کے مطابق امریکا میں طبی ماہرین جگر کی پراسرار بیماری کے پھیلاؤ کی تحقیقات کر رہے ہیں، جس کی وجہ سے اب تک پانچ بچے ہلاک اور 100 سے زائد جگر کی شدید بیماری میں مبتلا ہو چکے ہیں۔

امریکی صحت حکام کے مطابق گزشتہ 7 ماہ میں 25 ریاستوں میں ہیپاٹائٹس کے 109 کیسز سامنے آ چکے ہیں، جن میں سے 8 بچوں کی جگر کی پیوند کاری بھی کرنی پڑی ہے۔

ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ جن بچوں میں جگر کی بیماری کی تشخیص ہوئی انھیں اڈینو وائرس سے انفیکشن ہوا، جمعے کو میڈیا بریفنگ میں بیماریوں کے کنٹرول اور روک تھام کے مرکز سی ڈی سی نے کہا ہے کہ بچوں میں شدید ہیپاٹائٹس کے 109 کیسز کی تحقیقات کی جا رہی ہے، فی الحال اس وبا کی وجہ کا تعین نہیں ہو سکا ہے۔

سی ڈی سی کے ڈپٹی ڈائریکٹر متعدی امراض ڈاکٹر جے بٹلر نے کہا ہے کہ ابتدائی تحقیقات کی بنیاد پر وائرل ہیپاٹائٹس کی کچھ عام وجوہ کو پیش نظر رکھ کر جانچ کی گئی تاہم جو کیسز سامنے آئے ہیں ان میں سے کسی میں بھی ان وجوہ کو کارفرما نہیں پایا گیا۔

تقریباً 90 فی صد بچوں کو اسپتال میں داخل ہونا پڑا، اور 14 فی صد کو انفیکشن کی وجہ سے جگر کی شدید ناکامی کے نتیجے میں جگر کی پیوند کاری کی ضرورت پڑی، سی ڈی سی کے مطابق متاثرہ بچوں کی درمیانی عمر 2 سال ہے۔

واضح رہے کہ ہیپاٹائٹس جگر کی سوزش ہے جو اکثر وائرس کی وجہ سے ہوتی ہے، سی ڈی سی کے مطابق امریکا میں وائرل ہیپاٹائٹس کی سب سے عام اقسام ہیپاٹائٹس اے، ہیپاٹائٹس بی اور ہیپاٹائٹس سی ہیں، جو کہ امریکا میں جگر کے کینسر اور جگر کی پیوند کاری کی سب سے بڑی وجہ ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں