The news is by your side.

Advertisement

قومی اسمبلی کے اجلاس میں گھمسان کا رن، اضافی نفری طلب

اسلام آباد: قومی اسمبلی میں بجٹ کے بعد ہونے والے اجلاس میں حکومت اور اپوزیشن اراکین نے شور شرابہ کیا اور ایک دوسرے پر بجٹ دستاویزات پھاڑ کر پھینکیں۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق قومی اسمبلی اجلاس میں وقفےکے دوران کتابوں کی جنگ ہوئی، حکومتی اور اپوزیشن ارکان نے ایک دوسرے پر بجٹ کی کتابیں پھاڑ کر پھینکیں۔

ایوان کے ماحول میں کشیدگی دیکھ کر اسیپکر قومی اسمبلی نے دوسری بار کارروائی کو کچھ دیر کے لیے معطل کرنے کا اعلان بھی کیا۔

ایوان میں کشیدگی بڑھتی کشیدگی اور اراکین کے درمیان ہاتھا پائی کے خدشے کو دیکھتے ہوئے  قومی اسمبلی سیکریٹریٹ نے سینیٹ سیکریٹریٹ سے رابطہ کیا اور صورت حال سے نمٹنے کے لیے مدد طلب کی۔

سینیٹ سیکرٹریٹ نے درخواست پر اضافی سارجنٹ ایٹ آرمزکی خدمات قومی اسمبلی کو دیں۔

دوسری جانب وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے کہا کہ ’قومی اسمبلی میں لڑائی کا آغاز رکن اسمبلی علی گوہربلوچ کےنعروں سے ہوا، ن لیگی ارکان اسمبلی نے پارلیمانی اقدارکو بالائے پشت ڈال کر غلط زبان استعمال کی، جس پر نوجوان اراکین اسمبلی جذباتی ہوئے اور پھر بجٹ کی کتابیں پھینکنے کا سلسلہ شروع ہوا۔

 

Comments

یہ بھی پڑھیں