site
stats
پاکستان

حلقہ این اے 120، کاغذاتِ نامزدگی وقت ختم، 64 امیدواران دوڑ میں شامل

Political parties

اسلام آباد: نوازشریف کی نااہلی کے بعد خالی ہونے والی قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 120 کی نشست پر کاغذاتِ نامزدگی جمع کروانے کا وقت ختم ہوگیا، انتخابات لڑنے کے لیے 64 امیدواروں نے کاغذاتِ نامزدگی جمع کروائے۔

الیکشن کمیشن کے ذرائع کے مطابق قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 120 میں کلثوم نواز ،یاسمین راشد،فیصل میرسمیت دیگرنےکاغذات نامزدگی جمع کرائے جبکہ دلچسپ بات یہ ہے کہ نوازشریف نامی شخص نے بھی کاغذات نامزدگی جمع کروائے۔ الیکشن کمیشن پنجاب میں کاغذات جمع کروانے نوازشریف کے والد کا نام محمد شریف اور بھائی کا نام شہباز شریف ہے۔

الیکشن کمیشن پنجاب میں حلقہ این اے 120 کے ضمنی الیکشن کے لیے کاغذات نامزدگی 10 سے 12 اگست تک وصول کیے گئے جبکہ آج اس کی مدت ختم ہوگئی، ملک کی بڑی چھوٹی سیاسی جماعتیں الیکشن میں حصہ لے رہی ہیں جن میں مسلم لیگ ن کی کلثوم نواز اور حافظ نعمان، تحریک انصاف کی ڈاکٹر یاسمین راشد اور عندلیب عباس، پی پی پی کے فیصل میر، زبیر کاردار، عزیزالرحمان چن اور ساجدہ میر جبکہ شہید بھٹو گروپ سے شکیل گیلانی نے کاغذات نامزدگی جمع کروائے، جماعت اسلامی کے ذکراللہ مجاہد اور عوامی تحریک کے اشیتاق چوہدری نے بھی کاغذات جمع کروائے۔

پڑھیں: این اے 120ضمنی انتخاب، 25 ہزار نئے ووٹرز کا اضافہ

الیکشن کمیشن امیدواران کے کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال 15 سے 17 اگست تک کی جائے گی جبکہ 21 اگست کو کاغذات کی منظوری یا مسترد ہونے کے حوالے سے اپیلیں سنی جائیں گی، 25 اگست تک امیدواران اپنے کاغذاتِ نامزدگی واپس لے سکیں گے اور امیدواروں کی حتمی فہرست 26 اگست کو آویزاں کی جائے گی جبکہ حلقہ این اے 120 کے ضمنی انتخابات کی پولنگ 17 ستمبر کو ہوگی۔

دوسری جانب ڈسٹرکٹ ریٹرننگ آفیسر نے کہا ہے کہ قانون کے مطابق تائید و تجویز کنندہ کا حلقے میں رہائشی ہونا ضروری ہے، نوازشریف کی عمر مقررہ حد سے کم ہے اس لیے اُن کے کاغذاتِ نامزدگی مسترد کردیے جائیں گے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top