نیب کا15 لاکھ یا اس سے زائد تنخواہ لینے والے سرکاری افسروں کے گرد گھیرا تنگ
The news is by your side.

Advertisement

نیب کا15 لاکھ یا اس سے زائد تنخواہ لینے والے سرکاری افسروں کے گرد گھیرا تنگ

اسلام آباد : نیب نے لاکھوں روپے تنخواہ لینے والے سرکاری افسران کے گرد گھیراتنگ کردیا اور سرکاری افسروں کے خلاف تحقیقات کے لئے ریجنل آفسز کو خط لکھ دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ڈی جی پی ایس او کی 37 لاکھ روپے ماہانہ تنخواہ کے انکشاف کے بعد نیب نے پندرہ لاکھ یا اس سے زائد تنخواہ لینے والے سرکاری افسروں کے خلاف تحقیقات کا آغاز کردیا۔

نیب ہیڈکواٹرز نے تمام ریجنل آفسز کو خط لکھ دیا، جس میں پوچھا گیا ہے کہ لاکھوں روپے تنخواہ لینے والے سرکاری افسران کی تعیناتی کیسے ہوئیں؟ تحقیقات ہوں گی۔

نیب نے ڈی جی پی ایس او سمیت دیگر افسران کی تنخواہوں اور تعیناتی کا ریکارڈ بھی طلب کرلیا۔

نیب ذرائع کے مطابق تفصیلات تمام متعلقہ اداروں کے ساتھ اے جی پی آر اور اسٹبلشمنٹ سے بھی مانگی ہیں۔

یاد رہے چند روز قبل قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس (ر) جاوید اقبال کا کہنا تھا کہ بڑی مچھلیوں پر قانون کے مطابق ہی ہاتھ ڈالا جائے گا، کسی کے ساتھ امتیاز نہیں برتا جائے گا۔

نیب چیئرمین کا کہنا تھا کہ نیب کی تحقیقات سائنسی ہوتی ہیں، وہ ملزم سے سائنسی بنیادوں پر تحقیقات کرتا ہے اور کرپشن کے ثبوت حاصل کرتا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں