The news is by your side.

Advertisement

استاد شاعر اور نام وَر مرثیہ گو نجم آفندی کی برسی

اردو کے نام وَر مرثیہ گو شاعر نجم آفندی 21 دسمبر 1975ء کو کراچی میں وفات پاگئے تھے۔ آج ان کا یومِ وفات ہے۔ نجم آفندی کا اصل نام میرزا تجمل حسین تھا۔ انھوں نے 1893ء میں آگرہ کے ایک علمی اور ادبی گھرانے میں آنکھ کھولی تھی۔

نجم آفندی کے والد بزم آفندی، اِن کے دادا مرزا عباس علی ملیح، پردادا مرزا نجف علی بلیغ اور پردادا کے بھائی مرزا جعفر علی فصیح بھی اپنے زمانے کے شعرا میں نمایاں تھے۔

مرزا جعفر علی فصیح کو سلطنتِ عثمانیہ کی جانب سے آفندی کا خطاب ملا تھا اور یہی خطاب ان کے خاندان کی شخصیات کے ناموں کا جزو بن گیا۔

نجم آفندی نے کم عمر ہی سے شاعری شروع کردی تھی۔ غزل گوئی سے انھوں نے اپنے تخلیقی سفر کا آغاز تو کیا مگر جلد ہی ان کے کلام میں مذہبی موضوعات نظر آنے لگے اور پھر وہ مرثیہ گوئی میں باکمال اور معروف ہوئے۔ وہ 1971ء میں‌ ہجرت کرکے پاکستان آئے تھے۔ نجم آفندی کے مرثیے، نوحے، قصائد اور رباعیات کے کئی مجموعے شایع ہوئے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں