The news is by your side.

Advertisement

نوازشریف کو4ہفتےکیلئےبیرون ملک جانے کی مشروط اجازت

اسلام آباد: حکومت نے سابق وزیراعظم نوازشریف کو علاج کے غرض سے4ہفتےکیلئےبیرون ملک جانےکی مشروط اجازت دے دی۔

تفصیلات کے مطابق ذیلی کمیٹی نے کابینہ کے فیصلے پر قائم رہتے ہوئے نوازشریف کو بیرون ملک جانے کے لیے عائد کردہ شرائط کو برقرار رکھا ہے۔

کابینہ کی ذیلی کمیٹی کے سربراہ فروغ نسیم نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ نوازشریف کو4 ہفتےکےلیے بیرون ملک جانے کی ون ٹائم اجازت ہوگی جب کہ نوازشریف یا شہبازشریف7ارب روپےکے سیکیورٹی بانڈزجمع کرائیں گے۔

فروغ نسیم نے واضح یا کہ ہم بیل بانڈزنہیں انڈیمنٹی بانڈمانگ رہےہیں۔

وفاقی وزیر نے بتایا کہ نوازشریف کو بیرون ملک جانے کے لیے آج کسی بھی وقت اجازت نامہ جاری کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ون ٹائم اجازت کامقصدای سی ایل سےمستقل نام نہیں نکالناہوتا، پہلےبھی کئی ملزمان کوایک وقت کی اجازت مل چکی ہے۔

فروغ نسیم کا کہنا تھا کہ فیصلہ نوازشریف کی صحت کی تشویشناک صورتحال کےباعث کیاگیا، میڈیکل بورڈکی رپورٹس بتارہی ہیں کہ نوازشریف کی طبیعت خراب ہےحکومت نےحکم جاری کردیا ہے اب نوازشریف کی ٹیم پرہے کہ وہ مانتےہیں یانہیں۔

اس موقع پر وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر نے کہا کہ نوازشریف کےایک وقت کی اجازت علاج کےلیےدی گئی ہے، نوازشریف کی ضمانت میں6ہفتےرہ رگئےہیں،وفاقی حکومتی کی ذمےداری بنتی ہےکہ ضمانت لے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کی جانب سےضمانت مانگناسیاسی فائدے کےلیےنہیں،ہم سےسوال ہوسکتاہےجانےکی اجازت دی توکیاکوئی ضمانت بھی لی،پہلےبھی کہاتھایہ کوئی سیاسی مسئلہ نہیں نہ سیاسی بنایا جائے۔

شہزاد اکبر کا کہنا تھا کہ کوئی این آر اویا ڈیل نہیں میرٹ پر فیصلہ ہوا ہے، ڈیل میں تو لوگ راتوں رات باہر چلے جاتے ہیں اور پتہ بھی نہیں چلتا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں