site
stats
پاکستان

نہال ہاشمی کی متنازعہ تقریر: مقدمے میں دہشت گردی کی دفعات شامل کرنے کا حکم

کراچی: صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی کی مقامی عدالت نے دھمکی آمیز تقریر کیس میں ن لیگ کے رہنما سینیٹر نہال ہاشمی کے خلاف مقدمے میں دہشت گردی کی دفعات شامل کرنے کی ہدایت کردی۔ نہال ہاشمی نے توہین عدالت کیس میں غیر مشروط معافی مانگنے کا فیصلہ کرلیا۔

مسلم لیگ ن کے رہنما نہال ہاشمی کی پاناما کیس کی تحقیقات کے لیے بنائی جانے والی جے آئی ٹی کے ارکان اور ججز کے خلاف دھمکی آمیز تقریر کے خلاف کیس میں کراچی کی مقامی عدالت نے مقدمے میں دہشت گردی کی دفعات شامل کرنے کی ہدایت کردی۔

کراچی کی مقامی عدالت میں نہال ہاشمی کی دھمکی آمیز تقریر کے خلاف درخواست کی سماعت میں پولیس کی رپورٹ جمع کروائی گئی۔ رپورٹ کے مطابق دھمکی آمیز تقریر سے افراتفری پھیلانے کی کوشش کی گئی۔

مزید پڑھیں: متنازع تقریر پر نہال ہاشمی کو مسلم لیگ ن سے نکال دیا گیا

دوسری جانب سینیٹر نہال ہاشمی نے سپریم کورٹ میں نئی درخواست دائر کر دی۔ نہال ہاشمی کا مؤقف ہے کہ میرے خلاف کراچی میں زیر سماعت فوجداری مقدمے کی کارروائی روکی جائے۔

توہین عدالت کیس کی سماعت 10 جولائی کو ہوگی۔ سپریم کورٹ نے نہال ہاشمی پر فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ کر رکھا ہے۔

ادھر نہال ہاشمی نے توہین عدالت کیس میں غیر مشروط معافی مانگنے کا فیصلہ کرلیا۔

نہال ہاشمی کا کہنا ہے کہ بطور وکیل عدالت سے معافی مانگنا میرے لیے اعزاز ہے۔ اپنی تقریر میں کسی جج یا جے آئی ٹی رکن کا نام نہیں لیا۔ بطور شہری عدلیہ کا احترام کی۔ ان کے مطابق ان کی تقریر کا ہدف عمران خان تھے۔

یاد رہے کہ چند روز قبل لیگی رہنما نہال ہاشمی نے کارکنان سے خطاب کرتے ہوئے جےآئی ٹی کو کھلے عام سنگین دھمکیاں دیتے ہوئے کہا تھا کہ ہم تمہارا یوم حساب بنا دیں گے۔

نہال ہاشمی کی متنازعہ تقریر کے بعد ان کی مسلم لیگ ن سے رکنیت بھی خارج کردی گئی تھی۔


Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top