The news is by your side.

Advertisement

گیس بحال نہ ہوئی تو سوئی سدرن کے دفتر کے باہر دھرنا دیں گے: کراچی چیمبر اور سی این جی ایسوسی ایشن کا اعلان

کراچی/ حیدر آباد: کراچی چیمبر آف کامرس اور سندھ سی این جی ایسوسی ایشن نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے اعلان کیا ہے کہ گیس بحال نہ ہوئی تو سوئی سدرن کے دفتر کے باہر دھرنا دیں گے۔

تفصیلات کے مطابق صوبہ سندھ میں گیس بحران نے شدت اختیار کر لی ہے، جس کے باعث شہری شدید پریشانی میں مبتلا ہیں۔ کراچی چیمبر اور سی این جی ایسوسی ایشن نے حکومت سے صوبے میں گیس بحران حل کرنے کا مطالبہ کر دیا۔

سوئی سدرن ہیڈ آفس پر دھرنا دے کر بیٹھ جائیں گے اور سکھر سے کراچی تک قومی شاہراہ مکمل طور پر بند کر دیں گے۔

سندھ سی این جی ایسوسی ایشن

صدر کراچی چیمبر جنید ماکڈا نے کہا کہ سی این جی انڈسٹری بند ہو گئی ہے، حکومت سے اپیل ہے کہ گیس فراہمی کو یقینی بنائیں، ملک میں 4 ہزار ایم ایم سی ایف ڈی سپلائی ہو رہی ہے۔

جنید ماکڈا نے کہا کہ ایس ایس جی سی 24 گھنٹے میں گیس بحال کرے، گیس بحال نہ ہوئی تو چیئرمین، ایم ڈی سوئی سدرن گیس مستعفی ہوں، ہم ایس ایس جی سی کے دفتر کے باہر دھرنا دیں گے۔

چیئرمین سی این جی ایسوسی ایشن شبیر سلیمان جی نے کہا کہ سی این جی بندش سے معمولاتِ زندگی پر منفی اثر پڑے گا، گیس فراہمی بہتر ہونے پر سپلائی بحال کرنے کی یقین دہانی کرائی گئی ہے، کمپنی نے یقین دہانی کرائی ہے کہ بندش غیر معینہ مدت کے لیے نہیں ہے۔

دوسری طرف حیدر آباد میں سندھ سی این جی ایسوسی ایشن کے رہنماؤں نے پریس کانفرنس کی، ایسوسی ایشن کے سرپرستِ اعلیٰ ڈاکٹر ذوالفقار یوسفانی نے کہا کہ ایس ایس جی سی نے تمام اسٹیشنز کو سی این جی فراہمی بند کر دی ہے۔


یہ بھی پڑھیں:  کراچی میں گیس کا بحران مصنوعی نکلا


انھوں نے کہا کہ پبلک ٹرانسپورٹ کی تمام گاڑیاں سی این جی پر چلتی ہیں، سندھ میں 650 اسٹیشنز ہیں جن پر 40 ہزار لوگ کام کرتے ہیں، سب سے زیادہ گیس فراہمی کے با وجود سندھ سے زیادتی ہو رہی ہے۔

ذوالفقار یوسفانی نے کہا کہ ہم ایس ایس جی سی ہیڈ آفس پر دھرنا دے کر بیٹھ جائیں گے، سکھر سے کراچی تک قومی شاہراہ مکمل طور پر بند کر دیں گے، جب تک مطالبات پورے نہیں ہوتے ہم نہیں اٹھیں گے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں