site
stats
پاکستان

خبرلیکس تحقیقاتی کمیٹی: تحریک انصاف،عوامی تحریک اور ق لیگ نے مسترد کردی

لاہور: سابق نائب وزیر اعظم چوہدری پرویز الہی نے کہا ہے کہ متنازعہ خبر باہر نکالنے کے ذمہ داران کو سیکیورٹی ایکٹ کے تحت سزا دی جانی چاہیے انہوں نے حکومت کی جانب سے بنائی جانے والی کمیٹی کو قوم کے ساتھ مذاق قرار دے دیا جبکہ تحریک انصاف اور پاکستان عوامی تحریک نے بھی تحقیقات کے لیے بنائی جانے والی حکومتی کمیٹی کو مسترد کردیا۔

لاہور میں اپنی رہائش گاہ پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے چوہدری پرویز الہی کا کہنا تھا کہ ایسی کمیٹی بنانا جو نواز شریف کو رپورٹ کرے یہ قوم اور پاک فوج کے ساتھ مذاق ہے۔

چوہدری پرویز الہی نے مطالبہ کیا کہ جو کوئی بھی سکیورٹی بریچ کے پیچھے کردار ہیں انہیں سامنے لایا جائے اور ذمہ داران کے خلاف نیشنل سیکورٹی ایکٹ کے تحت کارروائی کی جائے۔

انہوں نے کہا کہ ڈان لیکس کے ذمہ داران کے خلاف نیشنل سیکیورٹی ایکٹ کے تحت کارروائی ہونی چاہیے، حکومتی کمیٹی نے حساس معاملے کی تحقیقات ریٹائرڈ جج کو سونپی ہے۔ انہوں نے سوال کیا کہ ایک ریٹائرڈ جج معاملے کی تحقیقات کیسے کرسکتا ہے۔


پڑھیں: متنازعہ خبر دینے والا صحافی سرل المیڈا بیرون ملک روانہ


 دوسری جانب پاکستان تحریک انصاف اور تحریک منہاج القرآن نے بھی متنازعہ خبر کی تحقیقات کے حوالے سے حکومتی کمیٹی کو مسترد کردیا ہے۔پی ٹی آئی نے خبرلیکس کے حوالے سے بنائی گئی مجوزہ کمیٹی کو مسترد کرتے ہوئے اعلان کیا کہ تحقیقات کے لیے موجودہ چیف جسٹس کی سربراہی میں بنائی جانے والی کمیٹی قابل قبول ہوگی۔

مزید پڑھیں: متنازع خبر:چوہدری نثارکا2دن میں کمیٹی بنانے کا اعلان


علاوہ ازیں علامہ طاہر القادری نے کہا کہ وزیر اعظم کی مرضی کے بغیر اتنی بڑی واردات نہیں ہو سکتی جب کہ سرل لیکس کی انکوائری ریٹائرڈ جج سے کروانا قومی سلامتی کے ساتھ ایک اور مذاق ہے کیونکہ کلین چٹ کے لیے ریٹائرڈ جج لایاجا رہا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top