The news is by your side.

Advertisement

کرائسٹ چرچ، بنگلا دیش اور بھارتی شہری کی میتیں وطن پہنچ گئیں

نیوزی لینڈ کی وزیراعظم نے 29 مارچ کو شہدا سے منسوب کردیا

ڈھاکا: سانحہ کرائسٹ چرچ میں شہید ہونے والے مزید تین شہدا کی میتیں بنگلادیش اور بھارت پہنچا دی گئیں۔

تفصیلات کے مطابق نیوزی لینڈ کی مسجد میں شہید ہونے والے دو شہریوں کی میت ڈھاکا پہنچ دی گئی جبکہ بھارت سے تعلق رکھنے والے شہری کا جسد خاکی ریاست کیرالہ پہنچا دیا گیا۔

دوسری جانب نیوزی لینڈ کی حکومت نے سانحہ کرائسٹ چرچ کے بعد انٹیلی جنس ایجنسیوں کو آزادانہ کام کرنے کی اجازت دیتے ہوئے اختیارات میں مزید توسیع دے دی۔

مزید پڑھیں: کرائسٹ چرچ میں جو ہوا وہ ہمارے ملک کی پہچان نہیں، وزیر اعظم نیوزی لینڈ

وزیراعظم جسٹنڈا نے حملہ آواز کے شہر کا دورہ کے موقع پر 29 مارچ کو شہدا کی یاد میں دن منانے کا اعلان کیا۔ بعد ازاں نیوزی لینڈ کی حکومت نے بھی 29 مارچ کو کرائسٹ چرچ شہدا کے نام سے منسوب کرتے ہوئے ہر سال قومی سطح پر بھرپور طریقے سے قومی دن منانے کا اعلان کیا۔

یاد رہے کہ 15 مارچ کو نیوزی لینڈ کی دو مساجد میں دہشت گرد حملے ہوئے تھے جس کے نتیجے میں خواتین وبچوں سمیت 50 نمازی شہید اور 20 سے زائد زخمی ہوئے تھے، پولیس نے چوبیس گھنٹے کے اندر مرکزی حملہ آور کو گرفتار کرلیا تھا جس کی شناخت 28 سالہ برینٹن ٹیرنٹ کے نام سے ہوئی تھی، حملہ آور آسٹریلوی شہری تھا جس کی آسٹریلیا نے بھی تصدیق کردی تھی۔

یہ بھی پڑھیں: سانحہ نیوزی لینڈ کے شہید اریب احمد کو سخی حسن قبرستان میں سپردخاک کردیا گیا

یہ بھی  یاد رہے کہ واقعے میں 9 پاکستانی شہری شہید ہوئے تھے جن میں سے ایک کی تدفین دو روز قبل کراچی کے سخی حسن قبرستان میں کی گئی۔ واقعے کے بعد نیوزی لینڈ کی وزیراعظم نے پریس کانفرنس کے دوران آٹومیٹک اورسیمی آٹومیٹک اسلحے پرپابندی کا اعلان کیا تھا، جیسنڈا ایرڈن کا کہنا تھا کہ شہری ممنوع اسلحے سے متعلق پولیس سے رابطہ کریں اور خود کار ہتھیار واپس کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں